Dil-Azari Bhi Ek Fan Hai

نظم

دل آزاری بھی اک فن ہے
اور کچھ لوگ تو
ساری زندگی اسی کی روٹی کھاتے ہیں
چاہے ان کا برج کوئی ہو
عقرب ہی لگتے ہیں

تیسرے درجے کے پیلے اخباروں پر یہ
اپنی یرقانی سوچوں سے
اور بھی زردی ملتے رہتے ہیں
مالا باری کیبن ہوں یا پانچ ستارہ ہوٹل
کہیں بھی قے کرنے سے باز نہیں آتے
اوپر سے اس عمل کو
فقرے بازی کہتے ہیں

جس کا پہلا نشانہ عموما
بل کو ادا کرنے والا ساتھی ہوتا ہے!
اپنے اپنے کنوئیں کو بحر اعظم کہنے اور سمجھنے والے
یہ ننھے مینڈک

ہر ہاتھی کو دیکھ کے پھولنے لگے ہیں
اور جب پھٹنے والے ہوں تو
ہاتھی کی آنکھوں پر پھبتی کسنے لگے ہیں
کوے بھی انڈے کھانے کے شوق کو اپنے
فاختہ کے گھر جا کر پورا کرتے ہیں
لیکن یہ وہ سانپ ہیں جو کہ
اپنے بچے
خود ہی چٹ کر جاتے ہیں

کبھی کبھی میں سوچتی ہوں کہ
سانپوں کی یہ خصلت
مالک جن و انس کی، انسانوں کے حق میں
کیسی بے پایاں رحمت ہے

 Nazam

 Dil-Azari Bhi Ek Fan Hai
Aur kuchh log to
Sari zindagi isi ki roti khate hain
Chahe un ka burj koi ho
Aqrab hi lagte hain

Tisre darje ke pile akhbaron par ye
Apni yarqani sochon se
Aur bhi zardi malte rahte hain
Mala bari cabin hon ya panch sitara hotel
Kahin bhi qai karne se baz nahin aate
Upar se is amal ko
Fiqre-bazi kahte hain

Jis ka pahla nishana umuman
Bill ko ada karne wala sathi hota hai!
Apne apne kunwen ko bahr-e-azam kahne aur samajhne wale
Ye nanhe meindak

Har hathi ko dekh ke phulne lage hain
Aur jab phatne wale hon to
Hathi ki aankhon par phabti kasne lage hain
Kawwe bhi ande khane ke shauq ko apne
Fakhta ke ghar ja kar pura karte hain
Lekin ye wo sanp hain jo ki
Apne bachche
Khud hi chat kar jate hain

Kabhi kabhi main sochti hun ki
Sanpon ki ye khaslat
Malik-e-jinn-o-ins ki, insanon ke haq mein
Kaisi be-payan rahmat hai!

اپنا تبصرہ بھیجیں