Bas Ek Andaza

بس اک اندازہ
برس گزرے تمہیں سوئے ہوئے
اٹھ جاؤ سنتی ہو اب اٹھ جاؤ
 
میں آیا ہوں
میں اندازے سے سمجھا ہوں
یہاں سوئی ہوئی ہو تم
یہاں روئے زمیں کے اس مقام آسمانی تر کی حد میں
باد ہائے تند نے
میرے لیے بس ایک اندازہ ہی چھوڑا ہے
Bas Ek Andaza

baras guzre tumhein soe hue
uth jao sunti ho ab uth jao

main aaya hun
main andaze se samjha hun

yahan soi hui ho tum
yahan ru-e-zamin ke is maqam-e-asmani-tar ki had mein

baad-ha-e-tund ne
mere liye bas ek andaza hi chhoda hai

اپنا تبصرہ بھیجیں