Musahiben Shah Mutmaen Howay Keh Sarfaraz

Musahiben Shah Mutmaen Howay Keh Sarfaraz

Musahiben Shah Mutmaen Howay Keh Sarfaraz Sar Burida
Bazuon samet shahr ki fasil par latak rahe hain

Aur har taraf sokon hai
Sokon hi sokon hai

Faghaan-e-khalq ahl-e-taifa ki nazar hogai
Maat-e-sabr wahshat dua ki nazar hogai
Umed-e-ajar be yaqeni jaza ki nazar hogai
Na itibar harf hai na aabru-e-khon hai
Sokon hi sokon hai

Musahiben shah mutmaen hoye keh Sarfaraz sar burida
Bazuon samet shahr ki fasil par latak rahe hain
Aur har taraf sokon hai
Sokon hi sokon hai

Khaleej iqtidar sarkashon se paat di gai
Jo hath aai dulat-e-ghanim baant di gai
Tanab-e-khema-e-lisan-o-lafz kaat di gai
Fiza wo hai keh aarzu-e-kher tak junon hai
Sokon hi sokon hai

Musahiben shah mutmaen howay keh Sarfaraz sar burida
Bazuon samet shahr ki fasil par latak rahe hain
Aur har taraf sokon hai
Sokon hi sokon hai

Musahiben shah mutmaen howay keh Sarfaraz sar burida
Bazuon samet shahr ki fasil par latak rahe hain
نظم
مصاجبین شاہ مطمئن ہوئے کہ سرفراز سر بریدہ
بازوؤں سمیت شہر کی فصیل پر لٹک رہے ہیں
اور ہر طرف سکون ہے
سکون ہی سکون ہے

فغان خلق اہل طائفہ کی نذر ہوگئی
متاع صبروحشت دعا کی نذر ہوگئی
امید اجر ہے یقینی جزا کی نذر ہوگئی
نہ اعتبار حرف ہے نہ آبروئے خون ہے
سکون ہی سکون ہے

مصاجبین شاہ مطمئن ہوئے کہ سرفراز سر بریدہ
بازوؤں سمیت شہر کی فصیل پر لٹک رہے ہیں
اور ہر طرف سکون ہے
سکون ہی سکون ہے

خلیج اقتدار سرکشوں سے پاٹ دی گئی
جو ہاتھ آئی دولت غنیم بانٹ دی گئی
طناب خیمہ لسان و لفظ کاٹ دی گئی
فضا وہ ہے کہ آرزوئے خیر تک جنوں ہے
سکون ہی سکون ہے

مصاجبین شاہ مطمئن ہوئے کہ سرفراز سر بریدہ
بازوؤں سمیت شہر کی فصیل پر لٹک رہے ہیں
اور ہر طرف سکون ہے
سکون ہی سکون ہے

مصاجبین شاہ مطمئن ہوئے کہ سرفراز سر بریدہ
بازوؤں سمیت شہر کی فصیل پر لٹک رہے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں