Mujh Say Milta Hai Par Jisam Ki Sarhad

Ghazal
Mujh Se Milta Hai Par Jism Ki Sarhad Paar Nahi Karta
Es ka matlab tu bhi mujh se sucha pyar nahi karta

Dushman acha ho tu jung main dil ko dharas rahti hai
Dushman acha ho tu peeche say waar nahi karta

Roz tujhe tute dil kam qameet per lena parhte hain
Es se behtar tha tu ishq ka karobar nahi karta
غزل
مجھ سے ملتا ہے پر جسم کی سر حد پار نہیں کرتا
اس کا مطلب تو بھی مجھ سے سچا پیار نہیں کرتا

دشمن اچھا ہو تو جنگ میں دل کو ڈھارس رہتی ہے
دشمن اچھا ہو تو وہ پیچھے سے وار نہیں کرتا

روز تجھے ٹوٹے دل کم قیمت پر لینا پڑتے ہیں
اس سے بہتر تھا تو عشق کا کاروبار نہیں کرتا

اپنا تبصرہ بھیجیں