Muhabbat

نظم:محبت
عروس شب کی زلفیں تھیں ابھی نا آشنا خم سے
ستارے آسماں کے بے خبر تھے لذت رم سے
قمر اپنے لباس نو میں بیگانہ سا لگتا تھا
نہ تھا واقف ابھی گردش کے آئین مسلم سے
ابھی امکاں کے ظلمت خانے سے ابھری ہی تھی دنیا
مذاق زندگی پوشیدہ تھا پہنائے عالم سے
کمال نظم ہستی کی ابھی تھی ابتدا گویا
ہویدا تھی نگینے کی تمنا چشم خاتم سے
سنا ہے عالم بالا میں کوئی کیمیاگر تھا
صفا تھی جس کی خاک پا میں بڑھ کر ساغر جم سے
لکھا تھا عرش کے پائے پہ اک اکسیر کا نسخہ
چھپاتے تھے فرشتے جس کو چشم روح آدم سے
نگاہیں تاک ميں رہتی تھیں لیکن کیمیا گر کی
وہ اس نسخے کو بڑھ کر جانتا تھا اسم اعظم سے
بڑھا تسبییح خوانی کے بہانے عرش کی جانب
تمنائے دلی آخر بر آئی سعی پیہم سے
پھرایا فکر اجزا نے اسے میدان امکاں میں
چھپے گی کیا کوئی شے بارگاہ حق کے محرم سے
چمک تارے سے مانگی ، چاند سے داغ جگر مانگا
اڑائی تیرگی تھوڑی سی شب کی زلف برہم سے
تڑپ بجلی سے پائی ، حور سے پاکیزگی پائی
حرارت لی نفسہائے مسیح ابن مریم سے
ذرا سی پھر ربوبیت سے شان بے نیازی لی
ملک سے عاجزی ، افتادگی تقدیر شبنم سے
پھر ان اجزا کو گھولا چشمۂ حیواں کے پانی میں
مرکب نے محبت نام پایا عرش اعظم سے
مہوس نے یہ پانی ہستی نوخیز پر چھڑکا
گرہ کھولی ہنر نے اس کے گویا کار عالم سے
ہوئی جنبش عیاں ، ذروں نے لطف خواب کو چھوڑا
گلے ملنے لگے اٹھ اٹھ کے اپنے اپنے ہمدم سے
خرام ناز پایا آفتابوں نے ، ستاروں نے
چٹک غنچوں نے پائی ، داغ پائے لالہ زاروں نے
Nazam:Muhabbat
Uroos-e-Shab Ki Zulfain Theen Abhi Na-Ashna Kham Se
Sitare Asaman Ke Be-Khabar The Lazzat-e-Ram Se
 
Qamar Apne Libas-e-Nawa Mein Begana Sa Lagta Tha
Na Tha Waqif Abhi Gardish Ke Aaeen-e-Muslim Se
 
Abhi Imkan Ke Zulmat Khane Se Ubhri Hi Thi Dunya
Mazaq-e-Zindagi Poshida Tha Pehnaye Alam Se
 
Kamal-e-Nazam-e-Hasti Ki Abhi Thi Ibtada Goya
Haweda Thi Nagine Ki Tamanna Chashme-e-Khatam Se
 
Suna Hai Alam-e-Bala Mein Koi Keemiya-Gar Tha
Safa Thi Jis Ki Khak-e-Pa Mein Barh Kar Saghir-e-Jam Se
 
Likha Tha Arsh Ke Paye Pe Ek Ikseer Ka Nuskha
Chupate The Farishte Jis Ko Chashm-e-Rooh-e-Adam Se
 
Nigahain Taak Mein Rehti Then Lekin Keemiya-Gar Ki
Woh Iss Nuskhe Ko Barh Kar Janta Tha Ism-e-Azam Se
 
Barha Tasbeeh Khawani Ke Bahane Arsh Ki Janib
Tamanna-e-Dili Akhir Bar Ayi Saee-e-Peham Se
 
Phiraya Fikr-e-Ajza Ne Use Maidan-e-Imkan Mein
Chupe Gi Kya Koi Shay Bargah-e-Haq Ke Mehram Se
 
Chamak Tare Se Mangi, Chand Se Dagh-e-Jigar Manga
Urhayi Teergi Thori Si Shab Ki Zulf-e-Barham Se
 
Tarap Bijli Se Payi,Hoor Se Pakeezgi Payi
Hararat Li Nafashaye Maseeh-e-Ibn-e-Mariam (A.S.) Se
 
Zara Si Phir Rabubiat Se Shan-e-Be-Niazi Li
Malak Se Ajazi, Uftadgi Taqdeer-e-Shabnam Se
 
Phir In Ajza Ko Ghola Chasma-e-Hewan Ke Pani Men
Marakkab Ne mohabbat Naam Paya Arsh-e-Azam Se
 
Muhwish Ne Ye Pani Hasti-e-Naukhaiz Par Chirka
Girah Kholi Hunar Ne Uss Ke Goya Kaar-e-Alam Se
 
Huwi Junbish Ayan, Zarron Ne Lutf-e-Khawab Ko Chora
Gile Milne Lage Uth Uth Ke Apne Apne Humdam Se
 
Kharaam-e-Naaz Paya Aftabon Ne, Sitaron Ne
Chatak Ghunchon Ne Payi, Dagh Paye Lala-Zaron Ne

اپنا تبصرہ بھیجیں