Khushi Ki Baat Hai Ya Dukh Ka Manzar Dekh Sakti Hun

غزل
خوشی کی بات ہے یا دکھ کا منظر دیکھ سکتی ہوں
تری آواز کا چہرہ میں چھو کر دیکھ سکتی ہوں

ابھی تیرے لبوں پہ ذکر فصل گل نہیں آیا
مگر اک پھول کھلتے اپنے اندر دیکھ سکتی ہوں

مجھے تیری محبت نے عجب اک روشنی بخشی
میں اس دنیا کو اب پہلے سے بہتر دیکھ سکتی ہوں

کنارہ ڈھونڈنے کی چاہ تک مجھ میں نہیں ہوگی
میں اپنے گھر میں اک ایسا سمندر دیکھ سکتی ہوں

وصال و ہجر اب یکساں ہیں وہ منزل ہے چاہت میں
میں آنکھیں بند کر کے تجھ کو اکثر دیکھ سکتی ہوں

ابھی تیرے سوا دنیا بھی ہے موجود اس دل میں
میں خود کو کس طرح تیرے برابر دیکھ سکتی ہوں
Ghazal
Khushi Ki Baat Hai Ya Dukh Ka Manzar Dekh Sakti Hun
Teri aawaz ka chehra main chhu kar dekh sakti hun

Abhi tere labon pe zikr-e-fasl-e-gul nahin aaya
Magar ek phul khilte apne andar dekh sakti hun

Mujhe teri mohabbat ne ajab ek raushni bakhshi
Main is duniya ko ab pahle se behtar dekh sakti hun

Kinara dhundne ki chah tak mujh mein nahin hogi
Main apne ghar mein ek aisa samundar dekh sakti hun

Visal-o-hijr ab yaksan hain wo manzil hai chahat mein
Main aankhen band kar ke tujh ko aksar dekh sakti hun

Abhi tere siwa duniya bhi hai maujud is dil mein
Main khud ko kis tarah tere barabar dekh sakti hun

اپنا تبصرہ بھیجیں