Misal is ki kahan hai koi zamane mein

مثال اس کی کہاں ہے کوئی زمانے میں
کہ سارے کھونے کے غم پائے ہم نے پانے میں
وہ شکل پگھلی تو ہر شے میں ڈھل گئی جیسے
عجیب بات ہوئی ہے اسے بھلانے میں
جو منتظر نہ ملا وہ تو ہم ہیں شرمندہ
کہ ہم نے دیر لگا دی پلٹ کے آنے میں
لطیف تھا وہ تخیل سے خواب سے نازک
گنوا دیا اسے ہم نے ہی آزمانے میں
سمجھ لیا تھا کبھی اک سراب کو دریا
پر اک سکون تھا ہم کو فریب کھانے میں
جھکا درخت ہوا سے تو آندھیوں نے کہا
زیادہ فرق نہیں جھکنے ٹوٹ جانے میں
misal is ki kahan hai koi zamane mein
ki sare khone ke gham pae hum ne pane mein
 
wo shakl pighli to har shai mein dhal gai jaise
ajib baat hui hai use bhulane mein
 
jo muntazir na mila wo to hum hain sharminda
ki hum ne der laga di palat ke aane mein
 
latif tha wo takhayyul se khwab se nazuk
ganwa diya use hum ne hi aazmane mein
 
samajh liya tha kabhi ek sarab ko dariya
par ek sukun tha hum ko fareb khane mein
 
jhuka darakht hawa se to aandhiyon ne kaha
ziyaada farq nahin jhukne tut jaane mein

اپنا تبصرہ بھیجیں