Meri sari zindagi ko be-samar us ne kiya

میری ساری زندگی کو بے ثمر اس نے کیا
عمر میری تھی مگر اس کو بسر اس نے کیا
میں بہت کمزور تھا اس ملک میں ہجرت کے بعد
پر مجھے اس ملک میں کمزور تر اس نے کیا
راہبر میرا بنا گمراہ کرنے کے لیے
مجھ کو سیدھے راستے سے در بہ در اس نے کیا
شہر میں وہ معتبر میری گواہی سے ہوا
پھر مجھے اس شہر میں نا معتبر اس نے کیا
شہر کو برباد کر کے رکھ دیا اس نے منیرؔ
شہر پر یہ ظلم میرے نام پر اس نے کیا
meri sari zindagi ko be-samar us ne kiya
umr meri thi magar us ko basar us ne kiya

main bahut kamzor tha is mulk mein hijrat ke baad
par mujhe is mulk mein kamzor-tar us ne kiya

rahbar mera bana gumrah karne ke liye
mujh ko sidhe raste se dar-ba-dar us ne kiya

shahr mein wo mo’atabar meri gawahi se hua
phir mujhe is shahr mein na-mo’tabar us ne kiya

shahr ko barbaad kar ke rakh diya us ne ‘munir’
shahr par ye zulm mere nam par us ne kiya

اپنا تبصرہ بھیجیں