Meri Ruh Mein Jo Utar Saken

غزل
مری روح میں جو اتر سکیں وہ محبتیں مجھے چاہئیں
جو سراب ہوں نہ عذاب ہوں وہ رفاقتیں مجھے چاہئیں
 
انہیں ساعتوں کی تلاش ہے جو کیلنڈروں سے اتر گئیں
جو سمے کے ساتھ گزر گئیں وہی فرصتیں مجھے چاہئیں
 
کہیں مل سکیں تو سمیٹ لا مرے روز و شب کی کہانیاں
جو غبار وقت میں چھپ گئیں وہ حکایتیں مجھے چاہئیں
 
جو مری شبوں کے چراغ تھے جو مری امید کے باغ تھے
وہی لوگ ہیں مری آرزو وہی صورتیں مجھے چاہئیں
 
تری قربتیں نہیں چاہئیں مری شاعری کے مزاج کو
مجھے فاصلوں سے دوام دے تری فرقتیں مجھے چاہئیں
 
مجھے اور کچھ نہیں چاہئے یہ دعائیں ہیں مرے سائباں
کڑی دھوپ میں کہیں مل سکیں تو یہی چھتیں مجھے چاہئیں
Ghazal
Meri Ruh Mein Jo Utar Saken Wo Mohabbaten Mujhe Chahiyen
Jo sarab hon na azab hon wo rifaqaten mujhe chahiyen

Unhin saaton ki talash hai jo calendaron se utar gain
Jo samay ke sath guzar gain wahi fursaten mujhe chahiyen

Kahin mil saken to samet la mare roz o shab ki kahaniyan
Jo ghubar-e-waqt mein chhup gain wo hikayaten mujhe chahiyen

Jo meri shabon ke charagh the jo meri umid ke bagh the
Wahi log hain meri aarzu wahi suraten mujhe chahiyen

Teri qurbaten nahin chahiyen mari shairi ke mizaj ko
Mujhe faslon se dawam de tari furqaten mujhe chahiyen

Mujhe aur kuchh nahin chahiye ye duaen hain mare saeban
Kadi dhup mein kahin mil saken to yahi chhaten mujhe chahiyen

اپنا تبصرہ بھیجیں