Mein Khak Hoon Aab Hoon Hawa Ho|-Parveen Shakir

Mein Khak Hoon Aab Hoon Hawa Ho|-Parveen Shakir

Mein Khak Hoon Aab Hoon Hawa Hoon
Aur aag ki tarah jal raha hoon
Teh khana zehn mein nah jane
Kia shai hai jisay tatulta hoon
Behroop nahi bhara hai mein ne
Jaisa bhi hoon samne khara hoon
Suntan to sabhi ki hoon magar mein
Karta hoon wohi jo chahta hoon
Achhon ko to sab hi chahte hain
Hai koi keh mein bohat bura hoon
Pata hoon usay bhi apni janib
Mur kar jo kisi ko dekhta hoon
Bachna hai mahal iss marzi mein
Jeene ke marz mein mubtala hoon
Sunta hi na ho koi tou kyu mein
Chhalaon fughan karon karhoon
Awron se to ijtinab tha hi
Ab apne wajood se khafa hoon
Baqi hain jo chand roz woh bhi
Taqdeer ke naam likh raha hoon
Likhta hoon har aik baat sunn kar
Yeh baat to mein bhi keh chuka hoon
Mein khak hoon aab hoon hawa hoon
Aur aag ki tarah jal raha hoon
غزل
میں خاک ہوں آب ہوں ہوا ہوں
اور آگ کی طرح جل رہا ہوں
تہہ خانہ ذہن میں نہ جانے
کیا شے ہے جسے ٹٹولتا ہوں
بہروپ نہیں بھرا ہے میں نے
جیسا بھی ہوں سامنے کھڑا ہوں
سنتا تو سبھی کی ہوں مگر میں
کرتا ہوں وہی جو چاہتا ہوں
اچھوں کو تو سب ہی چاہتے ہیں
ہے کوئی کہ میں بہت برا ہوں
پاتا ہوں اُسے بھی اپنی جانب
مڑ کر جو کسی کو دیکھتا ہوں
بچنا ہے محال اِس مرضی میں
جینے کے مرض میں مبتلا ہوں
سنتا ہی نہ ہو کوئی تو کیوں میں
چلاؤں فغاں کروں کراہوں
اوروں سے تو اجتناب تھا ہی
اب اپنے وجود سے خفا ہوں
باقی ہیں جو چند روز وہ بھی
تقدیر کے نام لکھ رہا ہوں
لکھتا ہوں ہر ایک بات سن کر
یہ بات تو میں بھی کہہ چکا ہوں
میں خاک ہوں آب ہوں ہوا ہوں
اور آگ کی طرح جل رہا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں