Malahon Ka Dehaan Bata Kar Daryaa Chori Kar|Tehzeeb Hafi Ghazal

Malahon Ka Dehaan Bata Kar Daryaa Chori Kar

Poet: Tehzeeb hafi

Ghazal

Malahon Ka Dehaan Bata Kar Daryaa Chori Kar Lena Hai
Qatra qatra kar ke mein ne sara chori kar lena hai
Tum usko majboor kiye rakhna baatin kertay rehny per
Itni dair mein, mei ne us ka lehjha chori kar lena ha
Janay kyu mujhko cho-paal mein ane se roka jata hai
Jaise mein ne in logo ka qisa chori kar lena hai
Aaj tou mein apni tasveer ko kamray mein hi bhool aya hun
Lekin aik din us ne mera batwa chori kar kena hai
Malahon ka dehaan bata kar daryaa chori kar lena hai
Qatra qatra kar ke mein ne sara chori kar lena hai
غزل
ملاحوں کا دھیان بٹا کر دریا چوری کر لینا ہے
قطرہ قطرہ کر کے میں نے سارا چوری کر لینا ہے
تم اُس کو مجبور کیے رکھنا باتیں کرتے رہنے پر
اتنی دیر میں ، میں نے اُس کا لہجہ چوری کر لینا ہے
جانے کیوں مجھکو چوپال میں آنے سے روکا جاتا ہے
جیسے میں نے ان لوگوں کا قصہ چوری کر لینا ہے
آج تو میں اپنی تصویر کو کمرے میں ہی بھول آیا ہوں
لیکن ایک دن اُس نے میرا بٹوا چوری کر لینا ہے
ملاحوں کا دھیان بٹا کر دریا چوری کر لینا ہے
قطرہ قطرہ کر کے میں نے سارا چوری کر لینا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں