Letay Thay Luft Hum Aadbi Ikhtilaaf Ka

Letay Thay Luft Hum Aadbi Ikhtilaaf Ka

Letay Thay Luft Hum Aadbi Ikhtilaaf Ka
Chekhauf usay pasand tha aur mujh ko kafka

Mein ghoomta hoon ghoomti kursi peh dil ke gird
Leta hoon ajar, khana-e-rab ke tuwaf ka

Mujh ko saza sunadi gai di bhi ja chuki
To ab bhi muntazir hai mere aitraaf ka

Uss dil se ho ke noor mora jab meri taraf
Samjha mein pehli bar usool initaaf ka

Khalwat manayen, dhayan lagayen daron ko jayen
Mauqa bhi de rahi hai waba itikaf ka

Sardi thi ya andheray ka dar tha keh raat khauf
Koona pakar ke baith gaya tha lahaf ka

Kanda kia hai ishq ne ik zakhm rooh par
Kaisa naya tareeqa hai autograph ka

Yaktai kia hai yeh tujhe samajhaye ga woh shakhs
Markaz samjh chukka ho jo kalay shagaaf ka

Dekho ! tamam dil hama tan gosh hain umair
Ab waqt ho chuka mere inkashif ka

Letay thay luft hum aadbi ikhtilaaf ka
Chekhauf usay pasand tha aur mujh ko kafka
غزل
لیتے تھے لطف ہم آدبی اِختلاف کا
چیخوف اُسے پسند تھا اور مجھ کو کافکا

میں گھومتا ہوں ، گھومتی کرسی پہ دل کے گِرد
لیتا ہوں اجر، خانہِ رب کے طواف کا

مجھ کو سزا سنادی گئی ، دی بھی جا چکی
تو اب بھی منتظر ہے مرے اعتراف کا

اُس دل سے ہو کے نور مڑا جب مری طرف
سمجھا میں پہلی بار اُصول انعطاف کا

خلوت منائیں، دھیان لگائیں ، دروں کو جائیں
موقع بھی دے رہی ہے وبا اعتکاف کا

سردی تھی یا اندھیرے کا ڈر تھا کہ رات خوف
کونا پکڑ کےبیٹھ گیا تھا لحاف کا

کندہ کیا ہے عشق نے اک زخم روح پر
کیسا نیا طریقہ ہے آٹؤ گراف کا

یکتائی کیا ہے یہ تجھے سمجھائے گا وہ شخص
مرکز سمجھ چکا ہو جو کالے شگاف کا

دیکھو! تمام دل ہمہ تن گوش ہیں عمیر
اب وقت ہو چکا میرے انکشاف کا

لیتے تھے لطف ہم آدبی اِختلاف کا
چیخوف اُسے پسند تھا اور مجھ کو کافکا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں