Kuchh Log Jo Sawar Hain Kaghaz Ki Naw Par

Kuchh Log Jo Sawar Hain Kaghaz Ki Naw Par

 غزل
کچھ لوگ جو سوار ہیں کاغذ کی ناؤ پر
تہمت تراشتے ہیں ہوا کے دباؤ پر

موسم ہے سرد مہر لہو ہے جماؤ پر
چوپال چپ ہے بھیڑ لگی ہے الاؤ پر

سب چاندنی سے خوش ہیں کسی کو خبر نہیں
پھاہا ہے ماہتاب کا گردوں کے گھاؤ پر

اب وہ کسی بساط کی فہرست میں نہیں
جن منچلوں نے جان لگا دی تھی داؤ پر

سورج کے سامنے ہیں نئے دن کے مرحلے
اب رات جا چکی ہے گزشتہ پڑاؤ پر

گلدان پر ہے نرم سویرے کی زرد دھوپ
حلقہ بنا ہے کانپتی کرنوں کا گھاؤ پر

یوں خود فریبیوں میں سفر ہو رہا ہے طے
بیٹھے ہیں پل پہ اور نظر ہے بہاؤ پر

موسم سے ساز غیرت گلشن سے بے نیاز
حیرت ہے مجھ کو اپنے چمن کے سبھاؤ پر

کیا دور ہے کہ مرہم زنگار کی جگہ
اب چارہ گر شراب چھڑکتے ہیں گھاؤ پر

تاجر یہاں اگر ہیں یہی غیرت یہود
پانی بکے گا خون شہیداں کے بھاؤ پر

پہلے کبھی رواج بنی تھی نہ بے حسی
نادم بگاڑ پر ہیں نہ خوش میں بناؤ پر

ہر رنگ سے پیام اترتے ہیں روح میں
پڑتی ہے جب نگاہ دھنک کے جھکاؤ پر

دانشؔ مرے شریک سفر ہیں وہ کج مزاج
ساحل نے جن کو پھینک دیا ہے بہاؤ پر
 

Ghazal

Kuchh Log Jo Sawar Hain Kaghaz Ki Naw Par
Tohmat tarashte hain hawa ke dabaw par

Mausam hai sard-mehr lahu hai jamaw par
Chaupal chup hai bhid lagi hai alaw par

Sab chandni se khush hain kisi ko hkabar nahin
Phaha hai mahtab ka gardun ke ghaw par

Ab wo kisi bisat ki fehrist mein nahin
Jin manchalon ne jaan laga di thi daw par

Suraj ke samne hain nae din ke marhale
Ab raat ja chuki hai guzishta padaw par

Gul-dan par hai naram sawere ki zard dhup
Halqa bana hai kanpti kirnon ka ghaw par

Yun khud-farebiyon mein safar ho raha hai tai
BaiThe hain pul pe aur nazar hai bahaw par

Mausam se saz ghairat-e-gulshan se be-niyaz
Hairat hai mujh ko apne chaman ke subhaw par

Kya daur hai ki marham-e-zangar ki jagah
Ab chaara-gar sharab chhidakte hain ghaw par

Tajir yahan agar hain yahi ghairat-e-yahud
Pani bikega khun-e-shahidan ke bhaw par

Pahle kabhi riwaj bani thi na be-hisi
Nadim bigad par hain na khush mein banaw par

Har rang se payam utarte hain ruh mein
Padti hai jab nigah dhanak ke jhukaw par

‘Danish’ mere sharik-e-safar hain wo kaj-mizaj
Sahil ne jin ko phenk diya hai bahaw par

اپنا تبصرہ بھیجیں