Kahin Se Koi Harf Moatabar| New Ghazal

Kahin Se Koi Harf Moatabar| New Ghazal

Kahin Se Koi Harf Moatabar Shayad Na Aaye
Musafir lot kar ab apne ghar shayad aaye

Qafas mein aab-o-dane ki farwani bohat hai
Aseeron ko khayal baal-o-par shayad na aaye

Kise maloom alh hijar par aisay bhi din aayein
Qayamat sar se guzray aur khabar shayad na aaye

Jahan ratoon ko parha rehte hoon aankhen mond kar log
Wahan mehtaab mein chehra nazar shayad na aaye

Kabhi aisa bhi din nikle keh jab soraaj ke hum rah
Koi sahib nazar aaye magar shayad na aaye

Sabhi ko sehel angari hunar lagne lagi hai
Saro par ghubaar reh guzar shayad na aaye

Kahin se koi harf moatabar shayad na aaye
Musafir lot kar ab apne ghar shayad aaye
غزل
کہیں سے کوئی حرف معتبر شاید نہ آئے
مسافر لوٹ کر اب اپنے گھر شاید نہ آئے

قفس میں آب و دانے کی فروانی بہت ہے
اسیروں کو خیال بال و پر شاید نہ آئے

کسے معلوم اہل ہجر پر ایسے بھی دن آئیں
قیامت سر سے گزرے اور خبر شاید نہ آئے

جہاں راتوں کو پڑا رہتے ہوں آنکھیں موند کر لوگ
وہاں مہتاب میں چہرہ نظر شاید نہ آئے

کبھی ایسا بھی دن نکلے کہ جب سورج کے ہم راہ
کوئی صاحب نظر آئے مگر شاید نہ آئے

سبھی کو سہل انگاری ہنر لگنے لگی ہے
سروں پر اب غبار رہ گزر شاید نہ آنے

کہیں سے کوئی حرف معتبر شاید نہ آئے
مسافر لوٹ کر اب اپنے گھر شاید نہ آئے

اپنا تبصرہ بھیجیں