Jine Ke Liye Jo Mar Rahe Hain

شاعر:احسان دانش
 غزل
جینے کے لیے جو مر رہے ہیں
آغاز حیات کر رہے ہیں

ہے حسن کا نام مفت بدنام
لوگ اپنی طلب میں مر رہے ہیں

غنچوں کی طرح کھلے تھے کچھ لوگ
کرنوں کی طرح بکھر رہے ہیں

ہے نقش قدم پہ نقش زنجیر
دیوانے جدھر گزر رہے ہیں

سنتا ہوں کہ آپ کے وفادار
انجام وفا سے ڈر رہے ہیں

ساحل کو بھی چھوڑتے نہیں لوگ
کشتی پہ بھی پاؤں دھر رہے ہیں

اب دشت میں نرم رو ہوا سے
کچھ نقش قدم نکھر رہے ہیں

روحوں میں نئی سحر کے باعث
ذہنوں کے نشے اتر رہے ہیں

ہم جیسے تمام نام لیوا
دھبا ترے نام پر رہے ہیں

خوشبو سے لدی بہار میں بھی
ہم درد سے بہرہ ور رہے ہیں

ہر دور کے فن شناس دانشؔ
ناکام حصول زر رہے ہیں

 GHAZAL
Jine Ke Liye Jo Mar Rahe Hain
Aaghaz-e-hayat kar rahe hain

Hai husn ka nam muft badnam
Log apni talab mein mar rahe hain

Ghunchon ki tarah khile the kuchh log
Kirnon ki tarah bikhar rahe hain

Hai naqsh-e-qadam pe naqsh-e-zanjir
Diwane jidhar guzar rahe hain

Sunta hun ki aap ke wafadar
Anjam-e-wafa se dar rahe hain

Sahil ko bhi chhodte nahin log
Kashti pe bhi panw dhar rahe hain

Ab dasht mein narm-rau hawa se
Kuchh naqsh-e-qadam nikhar rahe hain

Ruhon mein nai sahar ke bais
Zehnon ke nashe utar rahe hain

Hum jaise tamam nam-lewa
Dhabba tere nam par rahe hain

Khushbu se ladi bahaar mein bhi
Hum dard se bahra-war rahe hain

Har daur ke fan-shanas ‘danish’
Nakaam-e-husul-e-zar rahe hain

اپنا تبصرہ بھیجیں