Jhoot Kehti Thi Keh Jab Chahay Bechhar Sakta Hai

Jhoot Kehti Thi Keh Jab Chahay Bechhar Sakta Hai

Jhoot Kehti Thi Keh Jab Chahay Bechhar Sakta Hai
Dil mohabbat mein tere pair bhi par sakta hai

Pair ko girtay hoye dekh ke heraan hain log
Aisay toofan mein tu kohsar akhar sakta hai

Iss rafu gar ki salai mein zara jan nahi
Phir kisi chout peh yeh zakhm adhaar sakta hai

Bhagnay wale adu mere nishanay peh hai tou
Aakhri teer pusht mein gar sakta hai

Itni se chhot tu banti hai mere ishq parast
Pass bethay to mera hath pakar sakta hai

Rab kare khair mere surkh gulabon ke aseer
Mausam-e-zard mein yeh khawab bhi jhar sakta hai

Itni unchai se neechay ki taraf dekhte shakhs
Yeh tawazun hai kisi waqt bigar sakta hai

Jhoot kehti thi keh jab chahay bechhar sakta hai
Dil mohabbat mein tere pair bhi par sakta hai
غزل
جھوٹ کہتی تھی کہ جب چاہے بچھڑ سکتا ہے
دل محبت میں ترے پیر بھی پڑ سکتا ہے

پیڑ کو گرتے ہوئے دیکھ کے حیران ہیں لوگ
ایسے طوفان میں تو کہسار اکھڑ سکتا ہے

اِس رفو گر کی سلائی میں ذرا جان نہیں
پھر کسی چوٹ پہ یہ زخم ادھڑ سکتا ہے

بھاگنے والے عدو میرے نشانے پہ ہے تو
آخری تیر تری پشت میں گڑ سکتا ہے

اِتنی سے چھوٹ تو بنتی ہے مرے عشق پرست
پاس بیٹھے تو مرا ہاتھ پکڑ سکتا ہے

رب کرے خیر ، مرے سرخ گلابوں کے اسیر
موسمِ زرد میں یہ خواب بھی جھڑ سکتا ہے

اِتنی اونچائی سے نیچے کی طرف دیکھتے شخص
یہ توازن ہے کسی وقت بگڑ سکتا ہے

جھوٹ کہتی تھی کہ جب چاہے بچھڑ سکتا ہے
دل محبت میں ترے پیر بھی پڑ سکتا ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں