Jahan Bhar Ki Tamam Aankhen Nachore Kar Jitna

Jahan Bhar Ki Tamam Aankhen Nachore Kar Jitna

Jahan Bhar Ki Tamam Aankhen Nachore Kar Jitna Num Banay Ga
Yeh kul mila kar bhi hijr ki raat mere griye se kam banay ga

Mein dasht hoon yeh mughalta hai nah shairana mubaligha hai
Mere badan par kahin qadam rakh ke dekh naqsh qadam banay ga

Hamara lasaha bahao warna lahad muqadas mazar ho gai
Yeh surkh kurta jalao warna baghawatoon ka ilm banay ga

Tu kyun nah hum panch saat din tak mazeed sochen bananay se qabal
Meri chatti hes bata rahi hai yeh rishta tootay ga gam banay ga

Mujh aisay logon ka tairh qudrati hai so aitraaz kaisa
Shadeed num khaak se jo paikar banay ga yeh teh hai kham banay ga

Suna howa hai jahaan mein bekar kuch nahi hai so ji rahay hain
Bana howa hai yaqeen keh iss raigani se kuch aham banay ga

Keh shahzaday keh aadaten dekh kar sabhi iss peh muttafiq hain
Yeh joon hi hakim bana mehal ka wasee raqba haram banay ga

Mein aik tarteeb se lagata raha hoon ab tak sukoot apna
Sada ke waqfay nikal iss ko shuru se sun radham banay ga

Safaid romal jab kabootar nahi bana to woh shobidah baz
Palatnay walon se keh raha tha ruku khuda ki qasam banay ga

Jahan bhar ki tamam aankhen nachore kar jitna num banay ga
Yeh kul mila kar bhi hijr ki raat mere griye se kam banay ga
غزل
جہاں بھر کی تمام آنکھیں نچوڑ کر جتنا نم بنے گا
یہ کُل ملا کر بھی ہجر کی رات میرے گِریے سے کم بنے گا

میں دشت ہوں یہ مغالطہ ہے نہ شاعرانہ مبالغہ ہے
مرے بدن پر کہیں قدم رکھ کے دیکھ نقشِ قدم بنے گا

ہمارا لاشہ بہاو ورنہ لحد مقدس مزار ہوگی
یہ سرخ کرُتا جلاؤ ورنہ بغاوتوں کا علم بنے گا

تو کیوں نہ ہم پانچ سات دن تک مزید سوچیں بنانے سے قبل
مری چھٹی حس بتا رہی ہے یہ رشتہ ٹوٹے گا غم بنے گا

مجھ ایسے لوگوں کا ٹیڑھ قدرتی ہے سو اعتراض کیسا
شدید نم خاک سے جو پیکر بنے گا یہ طے ہے خم بنے گا

سنا ہوا ہے جہاں میں بے کار کچھ نہیں ہے سو جی رہے ہیں
بنا ہوا ہے یقیں کہ اِس رایگانی سے کچھ اہم بنے گا

کہ شہزادے کی عادتیں دیکھ کر سبھی اِس پہ متفق ہیں
یہ جوں ہی حاکم بنا محل کا وسیع راقبہ حرم بنے گا

میں ایک ترتیب سےلگاتا رہا ہوں اب تک سکوت اپنا
صدا کے وقفے نکال اِس کو شروع سے سن ردھم بنے گا

سفید رومال جب کبوتر نہیں بنا تو وہ شعبدہ باز
پلٹنے والوں سے کہہ رہا تھا رکو خدا کی قسم بنے گا

جہاں بھر کی تمام آنکھیں نچوڑ کر جتنا نم بنے گا
یہ کُل ملا کر بھی ہجر کی رات میرے گِریے سے کم بنے گا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں