Itnay Khamosh Bhi Raha Na Karo

Itnay Khamosh Bhi Raha Na Karo

Itnay Khamosh Bhi Raha Na Karo
Gham-e-judai mein youn kiya na karo

Khawab hotay hain dekhne ke liye
In mein jag kar magar raha na karo

Kuch na ho ga gila bhi karne se
Zalmo se gila kiya na karo

In se niklin hikayatain shayad
Harf lekh kar mita diya na karo

Apne rotbay ka kuch lahaz muneer
Yaar sab ko bana liye na karo

Itnay khamosh bhi raha na karo
Gham-e-judai mein youn kiya na karo
غزل
اتنے خاموش بھی رہا نہ کرو
غم جدائی میں یوں کیا نہ کرو

خواب ہوتے ہیں دیکھنے کے لیے
ان میں جا کر مگر رہا نہ کرو

کچھ نہ ہوگا گلہ بھی کرنے سے
ظالموں سے گلہ کیا نہ کرو

ان سے نکلیں حکایتیں شاید
حرف لکھ کر مٹا دیا نہ کرو

اپنے رتبے کا کچھ لحاظ منیرؔ
یار سب کو بنا لیا نہ کرو

اتنے خاموش بھی رہا نہ کرو
غم جدائی میں یوں کیا نہ کرو

اپنا تبصرہ بھیجیں