Meri Janib Rawana Hai Ajal Aahista Aahista

Meri Janib Rawana Hai Ajal Aahista Aahista

Meri Janib Rawana Hai Ajal Aahista Aahista
Bohat mohtaat chup panjon ke bal aahista aahista

Akela tha magar ab halqaye ahbab rakhta hoon
Kia hai ik misray ko ghazal aahista aahista

Kuch itna saath rehti hai mujhe dar hai kami teri
Nah ban jaye tera naimul badal aahista aahista

Utra aaya meri aankhon mein aakhir motiya najmi
Khile jheelun ke saathoon par kanwal aahista aahista

Meri janib rawana hai ajal aahista aahista
Bohat mohtaat chup panjon ke bal aahista aahista
غزل
میری جانب روانہ ہے اجل آہستہ آہستہ
بہت محتاط، چپ پجنوں کے بل آہستہ آہستہ

اکیلا تھا مگر اب حلقائے احباب رکھتا ہوں
کیا ہے اک مصرے کو غزل آہستہ آہستہ

کچھ اتنا ساتھ رہتی ہے مجھے ڈر ہے کمی تیری
نہ بن جائے تیرا نعمل البدل آہستہ آہستہ

اُتر آیا میری آنکھوں میں آخر موتیا نجمی
کھلے جھیلوں کے سطحوں پر کنول آہستہ آہستہ

میری جانب روانہ ہے اجل آہستہ آہستہ
بہت محتاط، چپ پجنوں کے بل آہستہ آہستہ

اپنا تبصرہ بھیجیں