Hum Jo Tareek Rahon Mein Mare G

شاعر:فیض احمدفیض
ہم جو تاریک راہوں میں مارے گئے

تیرے ہونٹوں کے پھولوں کی چاہت میں ہم
دار کی خشک ٹہنی پہ وارے گئے

تیرے ہاتوں کی شمعوں کی حسرت میں ہم
نیم تاریک راہوں میں مارے گئے

سولیوں پر ہمارے لبوں سے پرے
تیرے ہونٹوں کی لالی لپکتی رہی

تیری زلفوں کی مستی برستی رہی
تیرے ہاتھوں کی چاندی دمکتی رہی

جب گھلی تیری راہوں میں شام ستم
ہم چلے آئے لائے جہاں تک قدم

لب پہ حرف غزل دل میں قندیل غم
اپنا غم تھا گواہی ترے حسن کی

دیکھ قائم رہے اس گواہی پہ ہم
ہم جو تاریک راہوں پہ مارے گئے

نارسائی اگر اپنی تقدیر تھی
تیری الفت تو اپنی ہی تدبیر تھی

کس کو شکوہ ہے گر شوق کے سلسلے
ہجر کی قتل گاہوں سے سب جا ملے

قتل گاہوں سے چن کر ہمارے علم
اور نکلیں گے عشاق کے قافلے

جن کی راہ طلب سے ہمارے قدم
مختصر کر چلے درد کے فاصلے

کر چلے جن کی خاطر جہانگیر ہم
جاں گنوا کر تری دلبری کا بھرم

ہم جو تاریک راہوں میں مارے  گئے
Hum Jo Tareek Rahon Mein Mare Gay
tere honton ke phulon ki chahat mein hum 

dar ki khushk tahni pe ware gae 

tere haton ki shamon ki hasrat mein hum 

nim-tarik rahon mein mare gae 

suliyon par hamare labon se pare 

tere honTon ki lali lapakti rahi 

teri zulfon ki masti barasti rahi 

tere hathon ki chandi damakti rahi 

jab ghuli teri rahon mein sham-e-sitam 

hum chale aae lae jahan tak qadam 

lab pe harf-e-ghazal dil mein qindil-e-gham 

apna gham tha gawahi tere husn ki 

dekh qaem rahe is gawahi pe hum 

hum jo tarik rahon pe mare gae 

na-rasai agar apni taqdir thi 

teri ulfat to apni hi tadbir thi 

kis ko shikwa hai gar shauq ke silsile 

hijr ki qatl-gahon se sab ja mile 

qatl-gahon se chun kar hamare alam 

aur niklenge ushshaq ke qafile 

jin ki rah-e-talab se hamare qadam 

mukhtasar kar chale dard ke fasle 

kar chale jin ki khatir jahangir hum 

jaan ganwa kar teri dilbari ka bharam 

hum jo tarik rahon mein mare gae 

اپنا تبصرہ بھیجیں