Hawaye Tazaa Mein Phir Jism–O-Jaan Basane Ka

Hawaye Tazaa Mein Phir Jism–O-Jaan Basane Ka

Hawaye Tazaa Mein Phir Jism–O-Jaan Basane Ka
Daricha khulen keh hai waqt uss ke aane ka

Asar howa nahi uss par abhi zamane ka
Yeh khwab zad hai kirdar kis fasane ka

Kabhi kabhi woh hamein be sabab bhi milta hai
Asar howa nahi uss par abhi zamane ka

Abhi mein aik mahaaz dagar peh uljhi hoon
Chuna hai waqt yeh kia mujh ko aazmane ka

Kuchh iss tarah ka pur israar hai tera lehja
Keh jaise raaz kusha ho kisi khazane ka

Hawaye tazaa mein phir jism–o-jaan basane ka
Daricha khulen keh hai waqt uss ke aane ka
غزل
ہوائے تازہ میں پھر جسم و جاں بسانے کا
دریچہ کھولیں کہ ہے وقت اس کے آنے کا

اثر ہوا نہیں اس پر ابھی زمانے کا
یہ خواب زاد ہے کردار کس فسانے کا

کبھی کبھی وہ ہمیں بے سبب بھی ملتا ہے
اثرا ہوا نہیں اس پر ابھی زمانے کا

ابھی میں ایک محاذ دگر پہ الجھی ہوں
چنا ہے وقت یہ کیا مجھ کو آزمانے کا

کچھ اس طرح کا پر اسرار ہے ترا لہجہ
کہ جیسے راز کشا ہو کسی خزانے کا

ہوائے تازہ میں پھر جسم و جاں بسانے کا
دریچہ کھولیں کہ ہے وقت اس کے آنے کا

اپنا تبصرہ بھیجیں