Mein Rowon, So Nah Sakoo, Iss Qadar Hazen To

Mein Rowon, So Nah Sakoo, Iss Qadar Hazen To

Mein Rowon, So Nah Sakoo, Iss Qadar Hazen To Nahi
Tumhara hijr mera hijr-e-awwalen tu nahi

Badal keh dekh basarat kabhi baseerat se
Keh jo kahin bhi nahi hai yahen kahin to nahi

Falak se dekhen to apni zameen bhi neeli hai
To yeh falak bhi kisi aur ki zameen to nahi

Mohabbat aandhi hai warna kisi se pooch keh dekh
Mein khubaru to nahi aur to haseen to nahi

Mera zuban badalna hai kharij az imkaan
Jab aik baar tujhe kehh diya nahi to nahi

Yun nahi kisi ne kaha hai nahi kisi ka bhi to
Kisi ki baat peh waisay mujhe yaqeen to nahi

Bureda hath ilm, khwab mein dikhai diye
Umair aaj muharram ki aathwen to nahi

Mein rowon, so nah sakoo, iss qadar hazen to nahi
Tumhara hijr mera hijr-e-awwalen tu nahi
غزل
میں رووں، سو نہ سکو، اِس قدر حزیں تو نہیں
تمہارا ہجر میرا ہجرِ اولیں تو نہیں

بدل کہ دیکھ بصارت کبھی بصیرت سے
کہ جو کہیں بھی نہیں ہے یہیں کہیں تو نہیں

فلک سے دیکھیں تو اپنی زمیں بھی نیلی ہے
تو یہ فلک بھی کسی اور کی زمیں تو نہیں

محبت اندھی ہے ورنہ کسی سے پوچھ کہ دیکھ
میں خوبرو تو نہیں اور تو حسیں تو نہیں

میرا زبان بدلنا ہے خارج از اِمکان
جب ایک بار تجھے کہہ دیا نہیں تو نہیں

یو نہیں کسی نے کہا ہے نہیں کسی کا بھی تو
کسی کی بات پہ ویسے مجھے یقیں تو نہیں

بریدہ ہاتھ علم ، خواب میں دکھائی دیے
عمیر آج محرم کی آٹھویں تو نہیں

میں رووں، سو نہ سکو، اِس قدر حزیں تو نہیں
تمہارا ہجر میرا ہجرِ اولیں تو نہیں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں