Harem-E-Lafz Mein Kis Drjah Be Adab Nikla

Harem-E-Lafz Mein Kis Drjah Be Adab Nikla

Harem-E-Lafz Mein Kis Drjah Be Adab Nikla
Jise najeeb samjhaty thay km nasb nikla

Sipah-e-sham ke naizay pe aftab ka sar
Kis ihtimam se par wardigar shab nikla

Hamari garmi-e-guftaar bhi rahi be sood
Kisi ki chup ka bhi matlab ajab ajab nikla

Bahim howay bhi dil ke wahshateen na gayien
Wisaal mein bhi dilon ka ghubar kab nikla

Abhi utha bhi nahi tha kisi ka dast-e-karm
Keh sara sheher liye kasa-e-talab nikla

Harem lafz mein kis drjah be adab nikla
Jise najeeb samjhaty thay km nasb nikla
غزل
حریم لفظ میں کس درجہ بے ادب نکلا
جسے نجیب سمجھتے تھے کم نسب نکلا

سپاہ شام کے نیزے پہ افتاب کا سر
کس اہتمام سے پروردگار شب نکلا

ہماری گرمئی گفتار بھی رہی بے سود
کسی کی چپ کا بھی مطلب عجب عجب نکلا

بہم ہوئے بھی مگر دل کی وحشتیں نہ گئیں
وصال میں بھی دلوں کا غبار کب نکلا

ابھی اٹھا بھی نہیں تھا کسی کا دست کرم
کہ سارا شہر لیے کاسئہ طلب نکلا

حریم لفظ میں کس درجہ بے ادب نکلا
جسے نجیب سمجھتے تھے کم نسب نکلا

اپنا تبصرہ بھیجیں