Har Aik Jabir Se Inkari Rahe Gai

Har Aik Jabir Se Inkari Rahe Gai

Ghazal
Har Aik Jabir Se Inkari Rahe Gai
Mohabbat hamd hai jari rahe gai

Ham aisa kehne wale jab talak hain
Gazal bandook per bhari rahe gai

Tou kiya phir multavi samjho ya bosa
Yeh tayari bhi tayari rahe gai

Bhale tum jis qadar ansoo bha lo
Adakari tou adakari rahe gai

Kabhi tou kaam parna hai tujhe bhi
Bhala kab tak yeh bhikari rahe gai

Ali aik sher aisa sun liye hai
Kai din tak tou sar-shari rahe gai

Har aik jabir se inkari rahe gai
Mohabbat hamd hai jari rahe gai
غزل
ہر ایک جابر سے انکاری رہے گئی
محبت حمد ہے جاری رہے گئی

ہم ایسا کہنے والے جب تلک ہیں
غزل بندوق پر بھاری رہے گئی

تو کیا پھر ملتوی سمجھو یہ بوسہ
یہ تیاری بھی تیاری رہے گئی

بھلے تم جس قدر آ نسو بہا لو
اداکاری اداکاری رہے گئی

کبھی تو کام پڑنا ہے تجھے بھی
بھلا کب تک یہ بھکاری رہے گئی

علی ایک شعر ایسا سن لیا ہے
کئی دن تک تو سرشاری رہے گئی

ہر ایک جابر سے انکاری رہے گئی
محبت حمد ہے جاری رہے گئی

اپنا تبصرہ بھیجیں