Haalaat Ke Qadmon Pe Qalandar Nahi Girta

Ghazal
Haalaat Ke Qadmon Pe Qalandar Nahi Girta
Tote bhi jo tara zamee per nahi girta
 
Girte hain samandar main baday shoq se daryaa
Lakin kisi daryaa main samndar nahi girta
 
Samjho wahaan phal daar shajar koi nahi
Wo sahen keh jis main koi patthar nahi girta
 
Itna hua faida barish ki kami ka
Es sheher main ab koi phisal kar nahi girta
 
Inam ke lalach main lekhay madha kisi ko
Itna to kabhi koi sukhan war nahi girta
 
Heran hai kai roaz se tharra hua pani
Talaab main ab kyu koi kankar nahi girta
 
Us banda-e-khud-daar pe nabiyon ka hai saaya
Jo bhook main bhi luqma-e-tar per nahi girta
 
Karna hai jo sar maarka-e-ziist to sun le
Be baazoay-e-haider dar-e-khaibar nahi girta
 
Qaim hai qateel ab yeh mere sar ke sutuun per
Bhuunchaal bhi aae to mera ghar nahi girta
غزل
حالات کے قدموں پہ قلندر نہیں گرتا
ٹوٹے بھی جو تارا زمیں پر نہیں گرتا
 
گرتے ہیں سمندر میں بڑے شوق سے دریا
لیکن کسی دریا میں سمندر نہیں گرتا
 
سمجھو وہاں پھل دار شجر کوئی نہیں
وہ صحن کہ جس میں کوئی پتھر نہیں گرتا
 
اتنا ہوا فائدہ بارش کی کمی کا
اس شہر میں اب کوئی پھسل کر نہیں گرتا
 
انعام کے لالچ میں لکھے مدح کسی کی
اتنا تو کبھی کوئی سخن ور نہیں گرتا
 
حیراں ہے کئی روز سے ٹھرا ہوا پانی
تالاب میں اب کیوں کوئی کنکر نہیں گرتا
 
اُس بندہ خوددار پہ نبیوں کا ہے سایہ
جو بھوک میں بھی لقمئہ تر پر نہیں گرتا
 
کرنا ہے جو سر معرکہ زیست تو سن لے
بے بازؤے حیدر درِ خیبر نہیں گرتا
 
قائم ہے قتیلؔ اب یہ مرے سر کے ستون پر
بھونچال بھی آئے تو میرا گھر نہیں گرتا

اپنا تبصرہ بھیجیں