Be Hasi Se Dard Ke Ehsas Tak Le Aayen Gay

Be Hasi Se Dard Ke Ehsas Tak Le Aayen Gay

Be Hasi Se Dard Ke Ehsas Tak Le Aayen Gay
Hum gham-e-doraan ke jab qirtaas tak le aayen gay

Bhook ke shiddat badal sakti hai fitrat ke usool
Pait ke dukh sher ko bhi ghaas tak le aaye gay

Kis ko yeh maloom tha be chehrgi ke khauf se
Dairay apna badan kampass tak le aayen gay

Dar rahi hoon jin ke hone se abhi zardaar hoon
Chor dengay aik din aflaas tak le aayen gay

Zehr se neelay badan par jayen gay jab aap yun
Khush dili ko nafraton ki bas tak le aayen gay

Honton peh papri jami tu janti hoon yar log
Khainch ke darya ko meri pyaas tak le aayen gay

Be hasi se dard ke ehsas tak le aayen gay
Hum gham-e-doraan ke jab qirtaas tak le aayen gay
غزل
بے حسی سے درد کے احساس تک لے آئیں گے
ہم غمِ دوراں کو جب قرطاس تک لے آئیں گے

بھوک کی شدت بدل سکتی ہے فطرت کے اُصول
پیٹ کے دکھ شیر کو بھی گھاس تک لے آئیں گے

کس کو یہ معلوم تھا بے چہرگی کے خوف سے
دائرے اپنا بدن کمپاس تک لے آئیں گے

ڈر رہی ہوں جن کے ہونے سے ابھی زردار ہوں
چھوڑ دیں گے ایک دن، افلاس تک لے آئیں گے

زہر سے نیلے بدن پڑ جائیں گے جب آپ یوں
خوش دلی کو نفرتوں کی باس تک لے آئیں گے

ہونٹوں پہ پپڑی جمی تو جانتی ہوں یار لوگ
کھینچ کے دریا کو میری پیاس تک لے آئیں گے

بے حسی سے درد کے احساس تک لے آئیں گے
ہم غمِ دوراں کو جب قرطاس تک لے آئیں گے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں