Ghar

گھر :
چھپے ہیں اشک دروازوں کے پیچھے
چھتوں نے سسکیاں ڈھانپی ہوئی ہیں
دکھوں کے گرد دیواریں چنی ہیں
بظاہر مختلف شکلیں ہیں سب کی
مگر اندر کے منظر ایک سے ہیں
بنی آدم کے سب گھر ایک سے ہیں
 :Ghar
chhupe hain ashk darwazon ke pichhe
chhaton ne siskiyan dhanpi hui hain
 
dukhon ke gird diwaren chuni hain
ba-zahir mukhtalif shaklen hain sab ki
 
magar andar ke manzar ek se hain
bani-adam ke sab ghar ek se hain

اپنا تبصرہ بھیجیں