Dil Mohabbat Mein Mubtala Ho Jaye| Tehzeeb hafi

Dil Mohabbat Mein Mubtala Ho Jaye| Tehzeeb hafi

Dil Mohabbat Mein Mubtala Ho Jaye
Jo abhi na ho saka ho jaye

Tujh mein yeh aib hai keh khoobi hai
Jo tujhe dekh le tera ho jaye

Khud ko aesi jaga chupaya hai
Koi dhoondhay tou laa pata ho jaye

Mein tujhe chor kar chala jaon
Sayaa deewar se juda ho jaye

Bas wo itna kahe mujhe tum se
Aur phir cal munqata ho jaye

Dil bhi kaisa darakht hai hafi
Jo teri yaad se har ho jaye

Dil Mohabbat Mein Mubtala Ho Jaye
Jo abhi na ho saka ho jaye
غزل
دل محبت میں مبتلا ہو جائے
جو ابھی تک نہ ہو سکا ہو جائے

تجھ میں یہ عیب ہے کہ خوبی ہے
جو تجھے دیکھ لے ترا ہو جائے

خود کو ایسی جگہ چھپایا ہے
کوئی ڈھونڈھے تو لاپتا ہو جائے

میں تجھے چھوڑ کر چلا جاؤں
سایا دیوار سے جدا ہو جائے

بس وہ اتنا کہے مجھے تم سے
اور پھر کال منقطع ہو جائے

دل بھی کیسا درخت ہے حافی
جو تری یاد سے ہر ہو جائے

اپنا تبصرہ بھیجیں