Dil Jal Raha Tha Gham Se Magar Naghma-Gar

Ghazal
Dil Jal Raha Tha Gham Se Magar Naghma-Gar Raha
Jab tak raha main sath mere ye hunar raha

Subh-e-safar ki raat thi tare thay aur hawa
Saaya sa ek dair talak baam par raha

Meri sada hawa main bahut dur tak gai
Par main bula raha tha jise be-khabar raha

Guzri hai kya maze se khayalon main zindagi
Duri ka ye tilism bara kargar raha

Khauf aasman ke sath tha sar par jhuka hua
Koi hai bhi ya nahi hai yahi dil main dar raha

Us aakhiri nazar main ajab dard tha ‘munir’
Jaane ka us ke ranj mujhe umr bhar raha
غزل
دل جل رہا تھا غم سے مگر نغمہ گر رہا
جب تک رہا میں ساتھ مرے یہ ہنر رہا

صبح سفر کی رات تھی تارے تھے اور ہوا
سایا سا ایک دیر تلک بام پر رہا

میری صدا ہوا میں بہت دور تک گئی
پر میں بلا رہا تھا جسے بے خبر رہا

گزری ہے کیا مزے سے خیالوں میں زندگی
دوری کا یہ طلسم بڑا کارگر رہا

خوف آسماں کے ساتھ تھا سر پر جھکا ہوا
کوئی ہے بھی یا نہیں ہے یہی دل میں ڈر رہا

اس آخری نظر میں عجب درد تھا منیرؔ
جانے کا اس کے رنج مجھے عمر بھر رہ

اپنا تبصرہ بھیجیں