Bol


بول:
بول کہ لب آزاد ہیں تیرے
بول زباں اب تک تیری ہے
تیرا ستواں جسم ہے تیرا
بول کہ جاں اب تک تیری ہے
دیکھ کہ آہن گر کی دکاں میں
تند ہیں شعلے سرخ ہے آہن
کھلنے لگے قفلوں کے دہانے
پھیلا ہر اک زنجیر کا دامن
بول یہ تھوڑا وقت بہت ہے
جسم و زباں کی موت سے پہلے
بول کہ سچ زندہ ہے اب تک
بول جو کچھ کہنا ہے کہہ لے
Bol:
bol ki lab aazad hain tere
bol zaban ab tak teri hai
 
tera sutwan jism hai tera
bol ki jaan ab tak teri hai
 
dekh ki aahan-gar ki dukan mein
tund hain shoale surkh hai aahan
 
khulne lage quflon ke dahane
phaila har ek zanjir ka daman
 
bol ye thoda waqt bahut hai
jism o zaban ki maut se pahle
 
bol ki sach zinda hai ab tak
bol jo kuchh kahna hai kah le
 

اپنا تبصرہ بھیجیں