Tamam Khushiyon Ko Bas Ik Gham Ne Ghair Liya

Tamam Khushiyon Ko Bas Ik Gham Ne Ghair Liya

Tamam Khushiyon Ko Bas Ik Gham Ne Ghair Liya
Ajab hai keh zyada ko kam ne ghair liya

Kaneezen mal-e-ghanimat ke saath aati rahin
Mehal ka nisf kam az kam harm ne ghair liya

Taweel waqat phiray nasha e wajood mein hum
Phir aik roz achanak adam ne ghair liya

Hamaray khwab bare aur aankhen chhuti theen
Jaga banai to uss ko bhi nam ne ghair liya

Pata tha uss se bicharte hi dost ghairen gay
Wohi howa mujhe ranj-o-alam ne ghair liya

Hamari jaib mein bachpan se thi qalam ki jaga
Bare hoye to usay bhi raqam ne ghair liya

Muqaddassat ki nigrani karna parti hai
Issi usool ke taaht uss ko hum ne ghair liya

Tamam khushiyon ko bas ik gham ne ghair liya
Ajab hai keh zyada ko kam ne ghair liya
غزل
تمام خوشیوں کو بس اک غم نے گھیر لیا
عجیب ہے کہ زیادہ کو کم نے گھیر لیا

کنیزیں مالِ غنیمت کے ساتھ آتی رہیں
محل کا نصف کم از کم حرم نے گھیر لیا

طویل وقت پھرے نشہِ وجود میں ہم
پھر ایک روز اچانک عدم نے گھیر لیا

ہمارے خواب بڑے اور آنکھیں چھوٹی تھیں
جگہ بنائی تو اُس کو بھی نم نے گھیر لیا

پتہ تھا اُس سے بچھڑتے ہی دوست گھیریں گے
وہی ہوا مجھے رنج و عالم نے گھیر لیا

ہماری جیب میں بچپن سے تھی قلم کی جگہ
بڑے ہوئے تو اُسے بھی رقم نے گھیر لیا

مقدسات کی نگرانی کرنا پڑتی ہے
اِسی اصول کے تحت اُس کو ہم نے گھیر لیا

تمام خوشیوں کو بس اک غم نے گھیر لیا
عجیب ہے کہ زیادہ کو کم نے گھیر لیا

اپنا تبصرہ بھیجیں