Bata ai abr musawat kyun nahin karta

بتا اے ابر مساوات کیوں نہیں کرتا
ہمارے گاؤں میں برسات کیوں نہیں کرتا
محاذ عشق سے کب کون بچ کے نکلا ہے
تو بچ گیا ہے تو خیرات کیوں نہیں کرتا
وہ جس کی چھاؤں میں پچیس سال گزرے ہیں
وہ پیڑ مجھ سے کوئی بات کیوں نہیں کرتا
میں جس کے ساتھ کئی دن گزار آیا ہوں
وہ میرے ساتھ بسر رات کیوں نہیں کرتا
مجھے تو جان سے بڑھ کر عزیز ہو گیا ہے
تو میرے ساتھ کوئی ہاتھ کیوں نہیں کرتا
Bata Ai Abr Musawat Kyun Nahin Karta
hamare ganw mein barsat kyun nahin karta
 
mahaz-e-ishq se kab kaun bach ke nikla hai
tu bach gaya hai to khairaat kyun nahin karta
 
wo jis ki chhanw mein pachchis sal guzre hain
wo ped mujh se koi baat kyun nahin karta
 
main jis ke sath kai din guzar aaya hun
wo mere sath basar raat kyun nahin karta
 
mujhe tu jaan se badh kar aziz ho gaya hai
to mere sath koi hath kyun nahin karta

اپنا تبصرہ بھیجیں