Aik Suraj Tha Keh Taron Ke Gharane Se Utha

Aik Suraj Tha Keh Taron Ke Gharane Se Utha

Aik Suraj Tha Keh Taron Ke Gharane Se Utha
Aankh heran hai kia shakhs zamane se utha

Kis se pochun tere aaqa ka pata aye rehwar
Yeh ilm woh hai nah ab tak kisi shane se utha

Halqa khwab ko hi gird golu kas dala
Dast qatil ka bhi ihsaan nah dowane se utha

Phir koi aks shuaon se nah banne paya
Kaisa mehtab mere aaina khane se utha

Kia likha tha sar mahzar jisay pehchante hi
Pass betha howa har dost bahane se utha

Aik Suraj tha keh taron ke gharane se utha
Aankh heran hai kia shakhs zamane se utha
غزل
ایک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اُٹھا
آنکھ حیران ہے کیا شخص زمانے سے اُٹھا

کس سے پوچھوں ترے آقا کا پتہ اے رہوار
یہ علم وہ ہے نہ اب تک کسی شانے سے اُٹھا

حلقہ خواب کو ہی گرد گلو کس ڈالا
دست قاتل کا بھی احساں نہ دوانے سے اُٹھا

پھر کوئی عکس شعاعوں سے نہ بننے پایا
کیسا مہتاب میرے آئنہ خانے سے اُٹھا

کیا لکھا تھا سر محضر جسے پہچانتے ہی
پاس بیٹھا ہوا ہر دوست بہانے سے اُٹھا

ایک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اُٹھا
آنکھ حیران ہے کیا شخص زمانے سے اُٹھا

اپنا تبصرہ بھیجیں