Ab Ke Bar Phir

Ab Ke Bar Phir

Ab Ke Bar Phir
Mauj bahar ne

Farsh-e-sabz par
Sa’at-e-mahar mein
Har singhaar se
Hum donon ke naam likhe hain
Aur dua mangi hai keh aye ratoon ko jugnoo dene wale
Sukhi hoi mitti ko khushbo dene wale
Shukar guzar aankhon ko aansu dene wale
En donon ka sath na chute
Aur suna yeh hai hawaen
Ab ke bar bhi tez bahut hain
Shahr-e-wisal se aane wale mausam hijr angze bahut hain
Ab ke bar phir
Mauj bahar ne
نظم
اب کے بار پھر
موج بہار نے
فرش سبز پر
ساعت مہر میں
ہارسنگھار سے
ہم دونوں کے نام لکھے ہیں
اور دعا مانگی ہے کہ آے راتوں کو جگنو دینے والے
سوکھی ہوئی مٹی کو خوشبو دینے والے
شکر گزار آنکھوں کو آنسو دینے والے
ان دونوں کا ساتھ نہ چھوٹے
اور سنا یہ ہے کہ ہوائیں
اب کے بار بھی تیز بہت ہیں
شہر وصال سے آنے والے موسم ہجر انگیز بہت ہیں
اب کے بار پھر
موج بہار نے

اپنا تبصرہ بھیجیں