Ab Bhi Tauheen Itaat Nahi Hogi Hum Se

Ab Bhi Tauheen Itaat Nahi Hogi Hum Se

Ab Bhi Tauheen Itaat Nahi Hogi Hum Se
Dil nahi hoga tou bait nahi hogi hum se

Roz ik taza qaseeda nayi tashbeeb ke sath
Rizq bar-haq hai hi, khidmat nahi hogi hum se

Dil ke mabood jabeeno ke khudayi se alag
Aisay alam mein ibadat nahi hogi hum se

Ujrat ishq wafa hai tou hum aisay mazdoor
Kuch bhi karlen gay yeh mehnat nahi hogi hum se

Har nayi nasal ko ek taza madine ki talash
Sahiboo ab koi hijrat nahi hogi hum se

Sukhan aarayi ko soorat tou nikal sakti hai
Par yeh chakki ki mushaqqat nahi hogi hum se

Ab bhi tauheen itaat nahi hogi hum se
Dil nahi hoga tou bait nahi hogi hum se
غزل
اب بھی توہین اطاعت نہیں ہوگی ہم سے
دل نہیں ہوگا تو بیعت نہیں ہوگی ہم سے

روز اک تازہ قصیدہ نئی تشبیب کے ساتھ
رزق بر حق ہے ہی خدمت نہیں ہوگی ہم سے

دل کے معبود جبینوں کے خدائی سے الگ
ایسے عالم میں عبادت نہیں ہوگی ہم سے

اُجرت عشق وفا ہے تو ہم ایسے مزدور
کچھ بھی کرلیں گے یہ محنت نہیں ہوگی ہم سے

ہر نئی نسل کو اک تازہ مدینے کی تلاش
صاحبو اب کوئی ہجرت نہیں ہوگی ہم سے

سخن آرائی کو صورت تو نکل سکتی ہے
پر یہ چکی کی مشقت نہیں ہوگی ہم سے

اب بھی توہین اطاعت نہیں ہوگی ہم سے
دل نہیں ہوگا تو بیعت نہیں ہوگی ہم سے

اپنا تبصرہ بھیجیں