Aap Tou Aise Baat Karte Hain| New Ghazal Poetry

Aap Tou Aise Baat Karte Hain| New Ghazal Poetry

Aap Tou Aise Baat Karte Hain
Jaise hum doodh peete bache hain

Hum darate hain darne walon ko
Youn hi andar ke dar nikalte hain

Itni khushiyan nahi fizaon mein
Jitni muqaddar mein ghobare hain

Koi kashti jahan nahi jati
Hum wahan machhliyan pakarte hain

Phir koi baat chher deta hai
Uth ke jaise hi jane lagte hain

Chhor waise bhi aashiqui mein hamein
Kon se tamghe milne wale hain

Itne kapre nahi badalte tum
Jitni hum gariyan badalte hain

Aap Tou Aise Baat Karte Hain
Jaise hum doodh peete bache hain
غزل
آپ تو ایسے بات کرتے ہیں
جیسے ہم دودھ پیتے بچے ہیں

ہم ڈراتے ہیں ڈرنے والوں کو
یوں ہی اندر کے ڈر نکلتے ہیں

اتنی خوشیاں نہیں فضاؤں میں
جتنی مقدار میں غبارے ہیں

کوئی کشتی جہاں نہیں جاتی
ہم وہاں مچھلیاں پکڑتے ہیں

پھر کوئی بات چھیڑ دیتا ہے
اُٹھ کے جیسے ہی جانے لگتے ہیں

چھوڑ ویسے بھی عاشقی میں ہمیں
کون سے تمغے ملنے والے ہیں

اتنے کپڑے نہیں بد لتے تم
جتنی ہم گاڑیاں بدلتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں