Aadmi Ko Kitna Jeena Chahiye

Aadmi Ko Kitna Jeena Chahiye

Aadmi Ko Kitna Jeena Chahiye
Dou baras do soo baras ya chand saal

Baat agar jeene ki hai
Woh bhi khali hath khali dil
Khwabon ki baghair
Tu hazaron sal ka jeena ho keh lamho mein marna
Aik saa
Haan agar hathon mein tare
Dil mein umeeden hain
Aur aankhon mein khwab
To phir ek pal ka bhi jeena hai amar
Aik din saddyon barabar
Aik ik lamhe ki apni zindagi hai
Aur har ik lamhe ki apni zindagi hai
Aur har ik lamhe mein posheeda
Aisi an ginat duniyain
Jin mein saans lene wale pagal jante hain
Saans ki qeemat hai kya
Zindagi karna kise kehte hain
Aur marna hai kya
Jurm kya hai
Cheekh aur inkaar ke maani hain kya
Aadmi ko kitna jeena chahiye
نظم
آدمی کو کتنا جینا چاہئے
دو برس دو سو برس یا چند سال
بات اگر جینے کی ہے
وہ بھی خالی ہاتھ خالی دل
خوابوں کے بغیر
تو ہزاروں سال کا جینا ہو کہ لمحوں میں مرنا
ایک سا
ہاں اگر ہاتھوں میں تارے
دل میں اُمیدیں ہیں
اور آنکھوں میں خواب
تو پھر اک پل کا بھی جینا ہے امر
ایک دن صدیوں برابر
ایک اک لمحے کی اپنی زندگی ہے
اور ہر اک لمحے کی اپنی زندگی ہے
اور ہر اک لمحے میں پوشیدہ
ایسی ان گنت دنیائیں
جن میں سانس لینے والے پاگل جاتنے ہیں
سانس کی قیمت ہے کیا
زندگی کرنا کسے کہتے ہیں
اور مرنا ہے کیا
جرم کیا ہے
چیخ اور انکار کے معنی ہیں کیا

اپنا تبصرہ بھیجیں