Woh Hum Nahi Jinhein Sehna Yeh Jabar Aa Jata

Woh Hum Nahi Jinhein Sehna Yeh Jabar Aa Jata

Woh Hum Nahi Jinhein Sehna Yeh Jabar Aa Jata
Teri judaai mein kis tarah sabar aa jata

Faislen tor nah dete jo ab ke ahl qufs
To aur tarah ka ilaan-e-jabar aa jata

Woh fasla tha dua aur mustajabi mein
Keh dhoop mangne jate to abar aajata

Woh mujh ko chhor ke jis aadmi ke pass gaya
Barabri ka bhi hota to sabar aa jata

Wazir-o-shah bhi khas khanon se nikal aate
Agar guman mein angar-e-qabar aa jata

Woh hum nahi jinhein sehna yeh jabar aa jata
Teri judaai mein kis tarah sabar aa jata
غزل
وہ ہم نہیں جنہیں سہنا یہ جبر آ جاتا
تری جدائی میں کس طرح صبر آجاتا

فصیلیں توڑ نہ دیتے جو اب کے اہل قفس
تو اور طرح کا اعلان جبر آجاتا

وہ فاصلہ تھا دعا اور مستجابی میں
کہ دھوپ مانگنے جاتے تو ابر آجاتا

وہ مجھ کو چھوڑ کے جس آدمی کے پاس گیا
برابری کا بھی ہوتا تو صبر آجاتا

وزیر و شاہ بھی خس خانوں سے نکل آتے
اگر گمان میں انگار قبر آجاتا

وہ ہم نہیں جنہیں سہنا یہ جبر آ جاتا
تری جدائی میں کس طرح صبر آجاتا

اپنا تبصرہ بھیجیں