Waqt Kahin Pe Thehra Kab Hai| amjad islam amjad ghazal

Waqt Kahin Pe Thehra Kab Hai

Waqt Kahin Pe Thehra Kab Hai
Jo bichray wo milta kab hai

Aaina kia dekh sakay ga
Wo soorat mein utra kab hai

Bhoolay se tum a tou gaye ho
Yeh batao jana kab hai

Dewaron pe darj hai kia kia
Dekhna wala parta kab hai

Rehbar jis per lay ke chale hain
Yeh manzal ka rasta kab hai

Tum na haq naraz ho itne
Yeh minat hai shikwa kab hai

Arz-e-niaiz ishq pe bolay
Ham ne tum se pocha kab hai

Aqal ne kia kia samjhaya bhi
Ishq kisi ki bhi sunta kab hai

Jaan rahe gi ya jaye gi
Deewano ne socha kab hai

Kaam tou kashti hi aye gi
Dost kisi ka darya kab hai

Waqt kahin pe thehra kab hai
Jo bichray wo milta kab hai
غزل
وقت کہیں پہ ٹھہرا کب ہے
جو بچھڑے وہ ملتا کب ہے

آئینہ کیا دیکھ سکے گا
وہ صورت میں اترا کب ہے

بھولے سے تم آ تو گئے ہو
یہ تو بتاؤ جانا کب ہے

دیواروں پہ درج ہے کیا کیا
دیکھنے والا پڑھتا کب ہے

رہبر جس پر لے کے چلے ہیں
یہ منزل کا رستہ کب ہے

تم نہ حق ناراض ہو اتنے
یہ منت ہے شکوہ کب ہے

عرضِ نیازِ عشق پہ بولے
ہم نے تم سے پوچھا کب ہے

عقل نے کیا کیا سمجھایا بھی
عشق کسی کی بھی سنتا کب ہے

جان رہے گی یا جائے گی
دیوانوں نے سوچا کب ہے

کام تو کشتی ہی آئے گی
دوست کسی کا دریا کب ہے

وقت کہیں پہ ٹھہرا کب ہے
جو بچھڑے وہ ملتا کب ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں