Chekhte Hain Dar-O-Deewar Nahi Hota Mein

Chekhte Hain Dar-O-Deewar Nahi Hota Mein

Chekhte Hain Dar-O-Deewar Nahi Hota Mein
Aankh khulne peh bhi bedar nahi hota mein

Khawab karna ho safar karna ho ya rona ho
Mujh mein khobi hai bizar nahi hota mein

Ab bhala apne liye ban’na sanwarna kaisa
Khud se milna ho tou tayar nahi hota mein

Kon aayega bhala meri ayadat ke liye
Bas usi khauf se bimar nahi hota mein

Manzil ishq pe nikala tou kaha raste ne
Har kisi ke liye hamwar nahi hota mein

Teri tasweer se taskeen nahi hoti mujhe
Teri aawaz se sar-shaar nahi hota mein

Log kehte hain mein barish ki tarha hoon hafi
Aksar auqaat lagatar nahi hota mein

Chekhte hain dar-o-deewar nahi hota mein
Aankh khulne peh bhi bedar nahi hota mein
غزل
چیختے ہیں در و دیوار نہیں ہوتا میں
آنکھ کھلنے پہ بھی بیدار نہیں ہوتا میں

خواب کرنا ہو سفر کرنا ہو یا رونا ہو
مجھ میں خوبی ہے بیزار نہیں ہوتا میں

اب بھلا اپنے لیے بننا سنوارنا کیسا
خود سے ملنا ہو تو تیار نہیں ہوتا میں

کون آئے گا بھلا میری عیادت کے لئے
بس اسی خوف سے بیمار نہیں ہوتا میں

منزل عشق پہ نکلا تو کہا رستے نے
ہر کسی کے لئے ہموار نہیں ہوتا میں

تیری تصویر سے تسکین نہیں ہوتی مجھے
تیری آواز سے سرشار نہیں ہوتا میں

لوگ کہتے ہیں میں بارش کی طرح ہوں حافی
اکثر اوقات لگاتار نہیں ہوتا میں

چیختے ہیں در و دیوار نہیں ہوتا میں
آنکھ کھلنے پہ بھی بیدار نہیں ہوتا میں

اپنا تبصرہ بھیجیں