Uboor Kar Nah Sakay Hum Haden Hi Aisi Theen

Uboor Kar Nah Sakay Hum Haden Hi Aisi Theen

Uboor Kar Nah Sakay Hum Haden Hi Aisi Theen
Qadam qadam peh yahan mushkelen hi aisi theen

Woh mujh se rooth nah jati to aur kia karti
Meri khatayen meri laghzishen hi aisi theen

Kahin dikhai diye aik dosray ko hum
Tou moun bigar liey ranjeshen hi aisi theen

Bohat irada kiya koi kaam karne ka
Magar amal nah howa uljhaen hi aisi theen

Botun ke samne apni zuban kia khulti
Khuda maaf kare khwahishen hi aisi theen

Uboor kar nah sakay hum haden hi aisi theen
Qadam qadam peh yahan mushkelen hi aisi theen
غزل
عبور کر نہ سکے ہم حدیں ہی ایسی تھیں
قدم قدم پہ یہاں مشکلیں ہی ایسی تھیں

وہ مجھ سے روٹھ نہ جاتی تو اور کیا کرتی
مری خطائیں مری لغزشیں ہی ایسی تھیں

کہیں دکھائی دئے ایک دوسرے کو ہم
تو منہ بگاڑ لیے رنجشیں ہی ایسی تھیں

بہت ارادہ کیا کوئی کام کرنے کا
مگر عمل نہ ہوا الجھنیں ہی ایسی تھیں

بتوں کے سامنے اپنی زبان کیا کھلتی
خدا معاف کرے خواہشیں ہی ایسی تھیں

عبور کر نہ سکے ہم حدیں ہی ایسی تھیں
قدم قدم پہ یہاں مشکلیں ہی ایسی تھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں