Tou Apne Ajz Ka Kuch To Khayal Kar, Rakh De

Tou Apne Ajz Ka Kuch To Khayal Kar, Rakh De

Tou Apne Ajz Ka Kuch To Khayal Kar, Rakh De
Faqeer kasay se duniya nikaal kar, rakh de

Ajeeb mouj hawadis hai, leher girye ki
Jo aaye samne usko uchhaal kar, rakh de

Yeh karobaar bhi ghatay ki simt ja raha hai
Nah fasal-e-umar itna maalal kar, rakh de

Mein doobtay hoye hargiz nahi pukaron gi
Madad tujhe bhi nah mushkil mein dal kar, rakh de

Tere hunar peh bhi so so sawal uthen gay
Kaha tu tha kisi kozay mein dhal kar, rakh de

Tou muskura ke mujhe dekh, mein dua doon gi
Yeh sadqa tere masayal ko taal kar, rakh de

Hum aisay tark shuda note, yaad gaar hain bas
Kisi daraaz mein be had sanbhal kar, rakh de

Tou apne ajiz ka kuch to khayal kar, rakh de
Faqeer kasay se duniya nikaal kar, rakh de
غزل
تُو اپنے عجز کا کچھ تو خیال کر ، رکھ دے
فقیر کاسے سے دنیا نکال کر رکھ دے

عجیب موج حوادث ہے ، لہر گریے کی
جو آئے سامنے اُسکو اُچھال کر رکھ دے

یہ کاروبار بھی گھاٹے کی سمت جا رہا ہے
نہ فصلِ عمر کا اِتنا ملال کر، رکھ دے

میں ڈوبتے ہوئے ہر گز نہیں پکاروں گی
مدد تجھے بھی نہ مشکل میں ڈال کر رکھ دے

ترے ہنر پہ بھی سو سو سوال اُٹھیں گے
کہا تو تھا کسی کوزے میں ڈھال کر رکھ دے

تُو مسکرا کے مجھے دیکھ ، میں دعا دوں گی
یہ صدقہ تیرے مسائل کو ٹال کر رکھ دے

ہم ایسے ترک شدہ نوٹ، یاد گار ہیں بس
کسی دراز میں بے حد سنبھال کر رکھ دے

تُو اپنے عجز کا کچھ تو خیال کر ، رکھ دے
فقیر کاسے سے دنیا نکال کر رکھ دے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں