Tilisem E Yaar Yeh Pahlu Nikaal Letaa Hai

Ghazal
Tilisem E Yaar Yeh Pahlu Nikaal Letaa Hai
Keh patharon se bhi khushbo nikaal letaa hai

Hai be niyaz kuch aisa keh aankh lagte hi
Wo sar ke nechay se bazo nikaal letaa hai

Koi gali tere mufrore do jahaan ki tarf
Nahi niklti magar tu nikaal letaa hai

Khuda bacahe wo qazak sheher main aya
Ho jaib khali tu ansoo tu nikaal letaa hai

Ajibee sarf e taklam hai yaar e ashofta
Keh baat baat pe chako nikaal letaa hai

Agar kabhi usay jungle main shaam ho jaye
Tu apni jaib se jugno nikaal letaa hai
غزل
طلسمِ یار یہ پہلو نکال لیتا ہے
کہ پتھروں سے بھی خوشبو نکال لیتا ہے

ہے بے نیاز کچھ ایسا کہ آنکھ لگتے ہی
وہ سر کے نیچے سے بازؤ نکال لیتا ہے

کوئی گلی تیرے مفرورے دو جہاں کی طرف
نہیں نکلتی مگر تو نکال لیتا ہے

خدا بچائے وہ قزاق شہر میں آیا
ہو جیب خالی تو آنسو نکال لیتا ہے

عجیب سرف تکلم ہے یارِاشفتہ
کہ بات بات پے چاقو نکال لیتا ہے

اگر کبھی اُسے جنگل میں شام ہو جائے
تو اپنی جیب سے جگنو نکال لیتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں