Jahan Talak To Meri Zaat Ka Talluq Hai

Jahan Talak To Meri Zaat Ka Talluq Hai

Jahan Talak To Meri Zaat Ka Talluq Hai
Tere siwa yeh jahan bhar se la talluq hai

Hamein ikhattay kabhi dekhna kahen bethay
Nahi hai phir bhi lagay ga bara talluq hai

Mein uss ko toortay, andar se toot phoot gaya
Mera khayal tha kamzor sa talluq hai

Khushi ke baray mein mehdood ilm rakhta hoon
Woh yun keh uss se mera dour ka talluq hai

Hamara rabt taaruf se mawra hai dost
Kabhi kisi ko batana para, talluq hai

Mein qataa karta nahi sar sari talluq bhi
Tumharay sath tu acha bhala talluq hai

Talluqat kashida-e-hain aaj kal sab se
Aur iss ki waja tumhara mera talluq hai

Mein tujh se rabt bana kar rahon ga jo bhi ho
Tou aazmalay jahan tak tera talluq hai

Kisi ke saath banaya to phir khula mujh par
Barah-e-raast talluq bhi kia talluq hai

Jahan talak to meri zaat ka talluq hai
Tere siwa yeh jahan bhar se la talluq hai
غزل
جہاں تلک تو مری ذات کا تعلق ہے
ترے سوا یہ جہاں بھر سے لا تعلق ہے

ہمیں اکٹھے کبھی دیکھنا کہیں بیٹھے
نہیں ہے پھر بھی لگے گا بڑا تعلق ہے

میں اُس کو توڑتے، اندر سے ٹوٹ پھوٹ گیا
مرا خیال تھا کمزور سا تعلق ہے

خوشی کے بارے میں محدود علم رکھتا ہوں
وہ یوں کہ اُس سے مرا دور کا تعلق ہے

ہمارا ربط ، تعارف سے ماورا ہے دوست
کبھی کسی کو بتانا پڑا، تعلق ہے

میں قطع کرتا نہیں سر سری تعلق بھی
تمہارے ساتھ تو اچھا بھلا تعلق ہے

تعلقات کشدہِ ہیں آج کل سب سے
اور اِس کی وجہ تمہارا مرا تعلق ہے

میں تجھ سے ربط بنا کر رہوں گا جو بھی ہو
تو آزمالے جہاں تک ترا تعلق ہے

کسی کے ساتھ بنایا تو پھر کھلا مجھ پر
براہِ راست تعلق بھی کیا تعلق ہے

جہاں تلک تو مری ذات کا تعلق ہے
ترے سوا یہ جہاں بھر سے لا تعلق ہے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں