Sheetan Kay Dil Per Chalta Hun

Ghazal
Sheetan Ke Dil Per Chalta Hun Seeno Main Saffar Karta Hun
Us aankh ka kiya bachta hai main jis aankh main ghar karta hun

Jo mujh main utre hain un ko meri lahron ka andaza hai
Dariyaaon main uthtaa baithtaa hun sailaab basar karta hun

Meri tanhai ka zaher tumhari baniyaii le duube ga
Mujhe itne qareeb se mat dekho aankhon pe asar kerta hun
غزل
شیطان کے دل پر چلتا ہوں سینوں میں سفر کرتا ہوں
اُس آنکھ کا کیا بچتا ہے میں جس آنکھ میں گھر کرتا ہوں

جو مجھ میں اترے ہیں اُن کو میری لہروں کا اندازہ ہے
دریاؤں میں اٹھتا بیٹھتا ہوں سیلاب بسر کرتا ہوں

میری تنہائی کا زہر تمہاری بینائی لے ڈوبے گا
مجھے اتنے قریب سے مت دیکھو آنکھوں پہ اثر کرتا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں