Qalam Ho Taigh Ho Teesha Keh Dhal Mat Cheenio

Qalam Ho Taigh Ho Teesha Keh Dhal Mat Cheenio

Qalam Ho Taigh Ho Teesha Keh Dhal Mat Cheenio
Kabhi kisi se kisi ka kamal mat cheenio

Khushi ussi mein agar hai tou har khushi le lo
Yeh dukh yeh dard yeh hazan-o-malal mat cheenio

Issi khalash ke sabab phir mujhe ubharna hai
Khuda ke wastay ehad-e-zawal mat cheenio

Mein chhor sakta nahi saath estiqamat ka
Meri azan se josh-e-bilal mat cheenio

Abhi kitab nah chenio tum un ke hathon se
Hamare bachun ka husan-o-jamal mat cheenio

Hamari aankh mein yaadon ke zakhm rehne do
Hamre hath se phoolon ki daal mat cheenio

Abhi bujhao nah candle nah cake katoo abhi
Kuch aur dair mera pichla saal mat cheenio

Qalam ho taigh ho teesha keh dhal mat cheenio
Kabhi kisi se kisi ka kamal mat cheenio
غزل
قلم ہو تیغ ہو تیشہ کہ ڈھال مت چھنیو
کبھی کسی سے کسی کا کمال مت چھنیو

خوشی اسی میں اگر ہے تو ہر خوشی لے لو
یہ دکھ یہ درد یہ حزن و ملال مت چھنیو

اسی خلش کے سبب پھر مجھے ابھرنا ہے
خدا کے واسطے عہد زوال مت چھنیو

میں چھوڑ سکتا نہیں ساتھ استقامت کا
مری اذان سے جوش بلال مت چھنیو

ابھی کتاب نہ چھنیو تم ان کے ہاتھوں سے
ہمارے بچوں کا حسن و جمال مت چھنیو

ہماری آنکھ میں یادوں کے زخم رہنے دو
ہمارے ہاتھ سے پھولوں کی ڈال مت چھنیو

ابھی بجھاو نہ کینڈل نہ کیک کاٹو ابھی
کچھ اور دیر مرا پچھلا سال مت چھنیو

قلم ہو تیغ ہو تیشہ کہ ڈھال مت چھنیو
کبھی کسی سے کسی کا کمال مت چھنیو

اپنا تبصرہ بھیجیں