Pheeka Hai Ya Lehja Hai Tar-O-Taaza Ghazal Ka

Pheeka Hai Ya Lehja Hai Tar-O-Taaza Ghazal Ka

Pheeka Hai Ya Lehja Hai Tar-O-Taaza Ghazal Ka
Aaghaz se ho jata hai andaaz ghazal ka

Koi to kahe meer se simta nahi ab tak
Bikhra hai tere baad jo sheeraza ghazal ka

Saktay ki fizza mein yeh kai chhaid kare ga
Goonjay ga yahan dekhna aawaza ghazal ka

Chehra to kisi nazam ki manned sabak hai
Mutala hain tere hont kisi taza ghazal ka

Sim sim ki tarah ism sukhan yaad nah ho to
Har aik peh khulta nahi darwaza ghazal ka

Pheeka hai ya lehja hai tar-o-taaza ghazal ka
Aaghaz se ho jata hai andaaz ghazal ka
غزل
پھیکا ہے یا لہجہ ہے تروتازہ غزل کا
آغاز سے ہو جاتا ہے اندازہ غزل کا

کوئی تو کہے میر سے سمٹا نہیں اب تک
بکھرا ہے ترے بعد جو شیرازہ غزل کا

سکتے کی فضا میں یہ کئی چھید کرے گا
گونجے گا یہاں دیکھنا آوازہ غزل کا

چہرہ تو کسی نظم کی مانند سبک ہے
مطلع ہیں ترے ہونٹ کسی تازہ غزل کا

سم سم کی طرح اسم سخن یاد نہ ہو تو
ہر ایک پہ کھلتا نہیں دروازہ غزل کا

پھیکا ہے یا لہجہ ہے تروتازہ غزل کا
آغاز سے ہو جاتا ہے اندازہ غزل کا

اپنا تبصرہ بھیجیں