Nahin Milte ‘Shuur’ Aansu Bahate

غزل
نہیں ملتے شعورؔ آنسو بہاتے 
نظر آتے ہیں ہنستے مسکراتے

وہ گھنٹوں بیٹھتے ہیں دوستوں میں
مگر دیکھا اکیلے آتے جاتے

نکل جاتے ہیں نا معلوم جانب
وہ گرد و پیش سے نظریں بچاتے

جسے کہتے ہیں لوگ ام الخبائث
رہے ان کے اسی سے رشتے ناطے

وہ کیا جنات سے کرتے ہیں باتیں
انہیں پایا گیا ہے بدبداتے

اٹھا پائے نہ اپنا بوجھ بھی وہ
بھلا کیا دوسروں کے کام آتے

عیاں تھا بے خودی سے حال ان کا
کوئی کیا پوچھتا وہ کیا بتاتے

بتا لیتے ہیں موسم ہر طرح کا
عنادل بوستاں میں روتے گاتے

شعورؔ آپ آئے ہیں ملنے سر شام
ہمارے پاس ہوتی تو پلاتے
Ghazal
Nahin Milte ‘Shuur’ Aansu Bahate
Nazar aate hain hanste-muskuraate

Wo ghanon baiThte hain doston mein
Magar dekha akele aate jate

Nikal jate hain na-malum jaanib
Wo gird-o-pesh se nazren bachate

Jise kahte hain log ummul-khabais
Rahe un ke usi se rishte-nate

Wo kya jinnat se karte hain baaten
Unhen paya gaya hai budbudate

Utha pae na apna bojh bhi wo
Bhala kya dusron ke kaam aate

Ayan tha be-khudi se haal un ka
Koi kya puchhta wo kya batate

Bata lete hain mausam har tarah ka
Anadil bostan mein rote gate

‘Shuur’ aap aae hain milne sar-e-sham
Hamare pas hoti to pilate

اپنا تبصرہ بھیجیں