Muhajir Hain Magar Ham Aik Duniya Chor Aye Hain

Muhajir Hain Magar Ham Aik Duniya Chor Aye Hain

Muhajir Hain Magar Ham Aik Duniya Chor Aye Hain
Tumhare pass jitna hai ham itna chor aye hain

Kahani ka yeh hissa aaj sab se chopaya hai
Keh ham matti ki kahtir apna sona chor aye hain

Nae duniya basa lenay ki ek kamzor chahat mein
Porane ghar ki dehliz ko sota chor aye hain

Yaqeen ata nahi, lagta hai kachi neend mein shayad
Ham apna ghar gali apna mohalla chor aye hain

Hamare laut any ki duain karta rehta hai
Ham apni chatt pe jo Chidiyon ka jatha chor aye hain

Ham apne sath tasveerin tou lay aye hain shadi ki
Kisi shayar ne lekha tha jo sehra chor aye hain

Kai annkhen abhi tak yeh shikayat karti rehti hain
Keh behtay howay kajal ka darya choor aye hain

Shakar us jism se khelwar karna kaise choray gi
Keh ham jaman ke pedon ko akela chor aye hain

Muhajir hain magar ham aik duniya chor aye hain
Tumhare pass jitna hai ham itna chor aye hain

Wo bargad jis ke pedon se mehk ati thi pholon ki
Usi bargad mein aik haryal ka jora chor aye hain

Kal aik amrod walay se yeh kehna a gaya ham ko
Jahaan se aye hain ham es ki baghia chor aye hain

Wo hairat se hamein takta raha kuch dair phir bola
Wo singam ka ilaqa chot gaya ya chor aye hain

Abhi ham soch mein gum thay keh es se kia kaha jaye
Hamare ansuon ne raaz khola kia chor aye hain 

Muhajir hain magar ham aik duniya chor aye hain
Tumhare pass jitna hai ham itna chor aye hain

Guzartay waqt bazaron mein ab bhi yaad ata hai
Kisi ko es ke kamray mein sanwarta chor aye hain

Hamara rasta taktay howay patthra gai hoon gi
Wo aankhen jin ko ham khidki pe rakha chor aye hain

Tou ham ne chand itni be rukhi se baat kerta hai
Ham apni jheel mein aik chand utrta chor aye hain

Yeh do kamron ka ghar aur yeh sulagti zindagi apni
Wahaan itna bara nokar ka kamra chor aye hain

Hamein marne se pehle sab ko yeh taqid karna hai
Kisi ko mat bata dena keh kia kia chor aye hain

Muhajir hain magar ham aik duniya chor aye hain
Tumhare pass jitna hai ham itna chor aye hain
غزل
مہاجر ہیں مگر ہم ایک دنیا چھوڑ آئے ہیں
تمہارے پاس جتنا ہے ہم اتنا چھوڑ آئے ہیں

کہانی کا یہ حصہ آج تک سب سے چھپایا ہے
کہ ہم مٹی کی خاطر اپنا سونا چھوڑ آئے ہیں

نئی دنیا بسا لینے کی اک کمزور چاہت میں
پرانے گھر کی دہلیزوں کو سوتا چھوڑ آئے ہیں

یقیں آتا نہیں، لگتا ہے کچّی نیند میں شائد
ہم اپنا گھر گلی اپنا محلہ چھوڑ آئے ہیں

ہمارے لوٹ آنے کی دعائیں کرتا رہتا ہے
ہم اپنی چھت پہ جو چڑیوں کا جتھا چھوڑ آئے ہیں

ہم اپنے ساتھ تصویریں تو لے آئے ہیں شادی کی
کسی شاعر نے لکھا تھا جو سہرا چھوڑ آئے ہیں

کئی آنکھیں ابھی تک یہ شکایت کرتی رہتی ہیں
کہ ہم بہتے ہوئے کاجل کا دریا چھوڑ آئے ہیں

شکر اس جسم سے کھلواڑ کرنا کیسے چھوڑے گی
کہ ہم جامن کے پیڑوں کو اکیلا چھوڑ آئے ہیں

وہ برگد جس کے پیڑوں سے مہک آتی تھی پھولوں کی
اسی برگد میں ایک ہریل کا جوڑا چھوڑ آئے ہیں

کل اک امرود والے سے یہ کہنا آ گیا ہم کو
جہاں سے آئے ہیں ہم اس کی بغیا چھوڑ آئے ہیں

وہ حیرت سے ہمیں تکتا رہا کچھ دیر پھر بولا
وہ سنگم کا علاقہ چھٹ گیا یا چھوڑ آئے ہیں

ابھی ہم سوچ میں گم تھے کہ اس سے کیا کہا جائے
ہمارے آنسوؤں نے راز کھولا کیا چھوڑ آئے ہیں

گزرتے وقت بازاروں میں اب بھی یاد آتا ہے
کسی کو اس کے کمرے میں سنورتا چھوڑ آئے ہیں

ہمارا راستہ تکتے ہوئے پتھرا گئی ہوں گی
وہ آنکھیں جن کو ہم کھڑکی پہ رکھا چھوڑ آئے ہیں

تو ہم سے چاند اتنی بے رخی سے بات کرتا ہے
ہم اپنی جھیل میں ایک چاند اترا چھوڑ آئے ہیں

یہ دو کمروں کا گھر اور یہ سلگتی زندگی اپنی
وہاں اتنا بڑا نوکر کا کمرہ چھوڑ آئے ہیں

ہمیں مرنے سے پہلے سب کو یہ تاکید کرنا ہے
کسی کو مت بتا دینا کہ کیا کیا چھوڑ آئے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں