Mere Kamre Mein ek Aisi| Zia Mazkoor Ghazal

Mere Kamre Mein ek Aisi| Zia Mazkoor Ghazal

Mere Kamre Mein Ik Aisi Khirki Hai
Jo un aankhon ki kholne par kholti hai

Aisay tewar dushan hi ke hote hain
Pata karo yeh larki kis ki beti hai

Raat ko iss jungle mein rukna theek nahi
Iss se aage logon ki marzi hai

Mein iss shahr ka chand hoon aur yeh janta hoon
Kon si larki kis khirki mein bethi hai

Jab tu shaam ko ghar jaye tou parh lena
Tere bistar par ik chitthi chhori hai

Iss ki khatir ghar se bahir thehra hoon
Warna ilm hai chabi gate peh rakhi hai

Mere kamre mein ik aisi khirki hai
Jo un aankhon ki kholne par kholti hai
غزل
میرے کمرے میں اک ایسی کھڑکی ہے
جو اِن آنکھوں کے کھلنے پر کھلتی ہے

ایسے تیور دشمن ہی کے ہوتے ہیں
پتا کرو یہ لڑکی کس کی بیٹی ہے

رات کو اس جنگل میں رُکنا ٹھیک نہیں
اس سے آگے تم لوگوں کی مرضی ہے

میں اس شہر کا چاند ہوں اور یہ جانتا ہوں
کون سی لڑکی کس کھڑکی میں بیٹھی ہے

جب تو شام کو گھر جائے تو پڑھ لینا
تیرے بستر پر اک چٹھی چھوڑی ہے

اس کی خاطر گھر سے باہر ٹھہرا ہوں
ورنہ علم ہے چابی گیٹ پہ رکھی ہے

میرے کمرے میں اک ایسی کھڑکی ہے
جو اِن آنکھوں کے کھلنے پر کھلتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں